فرانسیسی عدالت نے 2009ء میں مہلک حادثہ پریمن کی فضائی کمپنی کو مجرم قرار دے دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

فرانس کی ایک عدالت نے یمن کی قومی فضائی کمپنی (الیمنیہ ایئرویز) کو2009 میں طیارے کےایک مہلک حادثے پرغیررضاکارانہ قتلِ عام کی مرتکب قراردیا ہے۔

ایک عدالتی ترجمان کے مطابق عدالت نے فیصلے میں الیمنیہ ایئرلائن کو 2لاکھ 25ہزاریورو (2لاکھ 25ہزار45ڈالر) جرمانہ ادا کرنے کا حکم دیا ہے۔اس کے علاوہ اسے ہرجانے اور قانونی اخراجات کی مد میں دس لاکھ یورو سے زیادہ رقم بھی ادا کرنا ہوگی۔

الیمنیہ ایئرویز نے فوری طور پر فرانسیسی عدالت کے اس فیصلے پرتبصرہ نہیں کیاہے۔

یادرہے کہ یمن کی قومی فضائی کمپنی کا طیارہ خراب موسم کی وجہ سے بحرہند کے جزیرہ نما کوموروس کے قریب سمندر میں گر کر تباہ ہوگیاتھا۔ایئربس اے 310-300 کی یہ مسافر پرواز یمن سے روانہ ہوئی تھی۔اس میں 66 فرانسیسی شہریوں سمیت 153 افراد سوار تھے۔اس مہلک حادثے میں طیارے میں سوار صرف ایک مسافرلڑکی زندہ بچ سکی تھی۔اس وقت اس کی عمر 12 سال تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں