چین اڑنے والی مقناطیسی کار کی رفتارجان کرآپ حیران رہ جائیں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اڑنے والی کاروں کے بارے میں ابھی تک یا تو خواب ہی دیکھے جاتے تھے یا کہیں ان کا تصور فلموں میں ملتا ہے مگرچین نے اب خواب کو حقیقت میں بدل دیا ہے۔ یہ کار سائنس کشن یا "اینیمیشن" فلموں تک محدود نہیں بلکہ چین حقیقی معنوں میں ایسی میگنیٹک اڑن کاروں کا جلد تجربہ کررہا ہے۔

چین کی سرکاری خبر رساں ایجنسی (شنہوا) کے مطابق چنگڈو صوبہ سیچوان میں ساؤتھ ویسٹ جیاوٹونگ یونیورسٹی کے چینی محققین نے گزشتہ ہفتے ان تبدیل شدہ کاروں کے روڈ ٹیسٹ کیے جو مقناطیسی قوت کا استعمال کرتے ہوئے ریلوے پر تقریباً 35 ملی میٹر بلند ہوتی ہیں۔

محققین نے سیڈان کو کار کے فرش پر طاقتور میگنیٹک لگایا، جس سے کاریں تقریباً 5 میل لمبی ریل کی پٹری پر چڑھ سکتی ہیں۔ "CNBC" اور "العربیہ ڈاٹ نیٹ" کی طرف سے دیکھی جانے والی رپورٹ کے مطابق مجموعی طور پر 8 کاروں کا تجربہ کیا گیا، ان میں سے ایک کار تقریباً 143 میل فی گھنٹہ یا 240 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار تک پہنچ گئی۔

ایک چینی صحافی کی جانب سے ٹویٹر پر پوسٹ کی گئی ایک ویڈیو میں گاڑیوں کو ٹریک پر تیرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ جب کہ شنہوا نیوز ایجنسی کا کہنا ہے کہ ریاستی ٹرانسپورٹ حکام نے تیز رفتار ڈرائیونگ کے لیے حفاظتی اقدامات کا مطالعہ کرنے کے لیے ٹیسٹ کیے تھے، لیکن ڈینگ زیگینگ جو یونیورسٹی کے پروفیسرز میں سے ایک ہیں۔ سرکاری خبر رساں ایجنسی کو بتایا کہ مقناطیسی لیویٹیشن مسافر کاروں کا استعمال توانائی کے استعمال کو کم کرنے اور گاڑیوں کی رینج بڑھانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

یہ "رینج" کے ساتھ الیکٹرک کار انڈسٹری کے سب سے بڑے مسائل میں سے ایک کا حل ہو سکتا ہے۔ کچھ الیکٹرک کار مالکان کو خدشہ ہے کہ وہ بجلی ختم ہونے کی وجہ سے اپنا سفر مکمل نہیں کر پائیں گے۔

1980 کی دہائی سے کچھ تجارتی ٹرینوں نے مقناطیسی لیویٹیشن، یا "میگلیو" کا استعمال کیا ہے۔ مقناطیسی فیلڈ کو تیز رفتاری سے گاڑیوں کو آگے بڑھانے یا کھینچنے کے لیے برقی بنانا شامل ہے۔ میگلیو ٹرینیں آج چین، جاپان اور جنوبی کوریا استعمال کرتے ہیں۔ پچھلے سال چین نے صوبہ شانڈونگ کے شہر چنگ ڈاؤ میں میگلیو بلٹ ٹرین کا ایک ورژن لانچ کیا تھا جو 373 میل فی گھنٹہ یا 620 کلومیٹر فی گھنٹہ سے زیادہ کی رفتار تک پہنچ سکتی ہے۔

میگلیو ٹیکنالوجی اسے رگڑ کی کمی کی وجہ سے روایتی انجن کی طاقت جتنی طاقت استعمال کیے بغیر تیز رفتاری سے سفر کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ یہ ٹیکنالوجی ارب پتی ایلون مسک کی ذیلی کمپنی دی بورنگ اور برطانوی وینچر کیپیٹلسٹ رچرڈ برانسن کی ورجن ہائپر لوپ ون نے ہائپر لوپ پروجیکٹس کے لیے تجویز کی ہے۔ محققین ایک دہائی سے زیادہ عرصے سے میگلیو کی صلاحیت کو تلاش کر رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں