امریکا،سعودی عرب اورفرانس کالبنانی حکام سے بلاتاخیر نیاصدرمنتخب کرنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکا، فرانس اور سعودی عرب نے لبنان کے ارباب اقتداروسیاست سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اگلے ماہ میشال عون کی میعاد ختم ہونے کے بعد بغیرکسی تاخیر کے نئے صدر کا انتخاب کریں۔

لبنان میں نمایاں اثرورسوخ رکھنے والے تینوں ممالک نے ایک مشترکہ بیان میں لبنان کی خودمختاری، سلامتی اوراستحکام کی حمایت کا اظہار کیا ہے۔

تجزیہ کاروں اور مبصرین کاخیال ہے کہ لبنان کسی منتخب صدر کی عدم موجودگی میں ایک بار پھر صدارتی خلا کے دورمیں داخل ہو جائے گا، جیسا کہ 2016 ء میں میشال عون کے انتخابات سے قبل ہوا تھا۔

تینوں ممالک نے مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ ایک ایسے صدرکا انتخاب انتہائی ضروری ہے جو لبنانی عوام کومتحد کرسکے اور موجودہ بحران پر قابو پانے کے لیے علاقائی اور بین الاقوامی کرداروں کے ساتھ مل کر کام کرسکے۔

انھوں نے مزید کہا:’’ہم ایک ایسی حکومت کے قیام کا مطالبہ کرتے ہیں جو لبنان کے سیاسی اورمعاشی بحرانوں سے نمٹنے کے لیے فوری طور پر ضروری ساختی اور معاشی اصلاحات کو نافذ کرنے کے قابل ہو۔خاص طور پران اصلاحات کو جوبین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف )کے ساتھ معاہدے تک پہنچنے کے لیے ضروری ہیں‘‘۔

بدھ کے روز جاری کردہ مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے ’’ہم (نئی) لبنانی حکومت تشکیل دینے کی ضرورت کا اعادہ کرتے ہیں اور طائف معاہدہ کی حمایت کا بھی اعادہ کرتے ہیں جو لبنان میں قومی اتحاد اور شہری امن کے تحفظ کو ممکن بناتا ہے‘‘۔

آئی ایم ایف نے بدھ کو لبنان کی سیاسی اشرافیہ کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا تھا اور کہا تھا کہ وہ ملک کوغیرمعمولی معاشی اور مالی بحران سے نکالنے کی غرض سے بین الاقوامی فنڈز کے حصول کے لیے درکارضروری اصلاحات پرعمل درآمد کرنے میں ناکام رہے ہیں۔

واشنگٹن، پیرس اور الریاض نے کہا ہے کہ وہ ان اصلاحات کے نفاذ میں مدد کے لیے لبنان کے ساتھ مل کر کام کرنے کے خواہاں ہیں۔انھوں نے لبنان کی مسلح افواج اور داخلی سلامتی کی فورسز کے’’اہم کردار‘‘ کو تسلیم کیا۔

تینوں ممالک نے ایران کی حمایت یافتہ شیعہ ملیشیا حزب اللہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ دونوں سکیورٹی ایجنسیاں لبنان کی خودمختاری اور داخلی استحکام کی قانونی محافظ ہیں۔

واضح رہے کہ ایران کے حمایت یافتہ گروپ حزب اللہ کے ساتھ ساتھ کیمپوں میں رہنے والے فلسطینی پناہ گزین ہی وہ واحد فریق ہیں جن کے پاس ریاست کے کنٹرول سے باہرہتھیار ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں