کیا ترکیہ امریکا کے ساتھ فوجی تعاون بحال کرنے میں کامیاب ہو جائے گا؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

گذشتہ روز ترکیہ کے صدر رجب طیب ایردوآن نے اعلان کیا کہ انقرہ اور واشنگٹن کے درمیان اختلافات کے باوجود ان کے ملک اور امریکا کے درمیان تجارتی تبادلے کا حجم ’’قلیل وقت‘‘ میں ایک سو ارب ڈالر تک پہنچ جائے گا۔ کیا ترک صدرامریکا کی طرف سے ترکیہ کی فوجی صنعت پرعاید پابندیوں کو ہٹانے میں کامیاب ہوسکیں گے۔

ترکیہ کی بولو یونیورسٹی میں بین الاقوامی تعلقات کے ماہر اور پروفیسر فیصل آئیہان جسے یونیورسٹی آف بولو ابانٹ ایزیٹ بیسال یونیورسٹی کے نام سے بھی جانا جاتا ہے نے اشارہ کیا کہ ترک صدر نے دفاع میں ترکیہ - امریکا تعاون کی راہ میں حائل رکاوٹوں کا مسئلہ اٹھایا۔ انہوں نے کہا کہ ایردوآن نے ترکیہ کی فوجی صنعتوں اور فوجی مصنوعات پر عاید پابندیوں کے خاتمے پر بھی بات کی۔

ایہان نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ "ترکیہ نے تقریباً 4 سال قبل امریکا پر اس وقت برہمی کا اظہار کیا تھا جب اس نے روس کے فضائی دفاعی نظام S-400 خریدا تھا۔ اس وقت سے دونوں فریقوں کے درمیان تنازعات شروع ہو گئے تھے اور بعد میں واشنگٹن نے اس پر پابندیاں عائد کر دی تھیں۔ تُرکیہ کے دفاعی شعبےانقرہ کو F-35 جنگی طیاروں کی تیاری کے پروگرام سے نکال دیا گیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ "انقرہ آج دفاعی صنعت کے شعبوں کے حوالے سے پہلے ہی مشکلات کا شکار ہے۔ ایک طرف تو اس نے روسی ہتھیار حاصل کر کے واشنگٹن کو ناراض کیا اور دوسری طرف یونان اور قبرص کے ساتھ اپنے فوجی تعاون کو مضبوط کر رہی ہیں۔ اس لیے ترکیہ کے صدر اس مخمصے پر قابو پانا چاہتے ہیں، خاص طور پر چونکہ واشنگٹن ترکیہ روس میں فوجی تعاون کو نارتھ اٹلانٹک ٹریٹی آرگنائزیشن (نیٹو) کے مفادات کو نقصان پہنچاتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ترکیہ نیٹو کے اندر امریکا کے ساتھ اپنے مسائل حل کرنے کے قابل ہو سکتا ہے، لیکن واشنگٹن اسے مغربی یا روسی ہتھیاروں کے حصول میں سے کسی ایک کا انتخاب پیش کرتا ہے۔ اس لیے اس مسئلے کے حل میں بڑی رکاوٹ ترکیہ اور روس کی فوج کے تعاون میں ہے۔ لیکن انقرہ یوکرین جنگ میں اپنے کردار کے ذریعے واشنگٹن کے ساتھ حل تلاش کر سکتا ہے۔

جمعرات کو ترک صدر نے اپنے ملک اور امریکا کے درمیان دفاعی صنعتوں کے شعبے میں تعاون کی راہ میں "مصنوعی رکاوٹوں" کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

انہوں نے کہا کہ امریکا کے ساتھ دفاعی صنعتوں میں ہمارے تعاون میں مصنوعی رکاوٹیں نیٹو کی سلامتی کو منفی طور پر متاثر کرتی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں