حضرت آدم کے بیٹوں کے ’خون‘ سے پیدا ہونے والا نایاب درخت کہاں پایا جاتا ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

"دو بھائیوں کا خون" کے نام سے جانا جانے والا درخت دنیا کے نایاب ترین درختوں میں سے ایک ہے، جو صرف یمنی جزیرے سقطریٰ پر قدرتی طور پر پایا جاتا ہے۔

یمنی معالجین نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ "دو بھائیوں کا خون" درخت دنیا کا نایاب درخت ہے۔ تاہم یہ ایسا ویسا بھی نہیں بلکہ اس کے بہت سے طبی فواید بھی ہیں۔ یہ درخت کئی اقسام کے انفیکشنز،جلد، ہاضمے کے مسائل اور معدے کے السر کے علاج کےعلاوہ اس کا برادہ مسوڑھوں کو صاف کرنے کے لیے ٹوتھ پیسٹ کی تیاری میں بھی استعمال ہوتا ہے۔

"دم الاخوین"

یہ درخت اس نام سے جڑا ہوا ہے، اس کی وجہ اس سے نکلنے والا سرخ خونی مائع مادہ ہے۔ جب آپ اس کی نرم چھال کو کھرچتے ہیں تو اس سے سرخ خون جیسا مائع نکلتا ہے۔ اس کا سائنسی نام "مرکیور سلفائیڈ رال" ہے۔ جب کہ کچھ اسے "ڈریگن کے خون کی ماں" کہتے ہیں۔

کتاب "یمن ان دی اینینٹ یونانی اور رومن ذرائع" کے مطابق یمن کے شہزادوں، عربوں اور چین کے شہنشاہوں نے ماضی میں اسے اپنے کپڑوں اور برتنوں کو رنگنے کے لیے استعمال کیا۔

اس کے علاوہ سقطریٰ جزیرے کے مقامی لوگ اس مائع کو زخم بھرنے، اسہال اور پیچش کے علاج کے طور پر، بخار کو کم کرنے والے اور دانتوں کو سفید کرنے کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔اس کے علاوہ منہ، گلے، آنت اور پیٹ کے السر کےعلاج میں بھی اس کا استعمال کیا جاتا ہے۔ تاہم ماہرین ڈاکٹروں کے مشورے کے بغیر اسے طبی مقاصد کے لیے استعمال کرنے سے منع کرتے ہیں۔

خون کے پہلے قطرے کی کہانی

اس درخت کے تاریخی نام (دو بھائیوں کا خون) کی طرف لوٹتے ہوئے تحقیق سے پتا چلتا ہے کہ یہ تین توحید پرست مذاہب میں مشہور ہونے والی قدیم کہانی کی طرف واپس چلا جاتا ہے۔ اس کے حوالے سے یہ ایک افسانوی کہانی ہے کہ یہ درخت حضرت آدم علیہ السلام اور حوا کے بیٹوں قابیل اور ہابیل کی لڑائی سے منسوب ہے۔ اس کہانی میں بیان کیا جاتا ہے کہ انسانی خون کا پہلا قطرہ اس وقت گرا جب ہابیل اور قابیل کی آپس میں لڑائی ہوئی۔ قابیل کے حملے میں ہابیل مارا گیا۔ ہابیل کا خون زمین پر گرا جس سے وہاں پرایک درخت اگا جس کے تنے میں خون موجود ہے۔ اس میں دونوں بھائیوں کا خون شامل ہے۔

قابل ذکر ہے کہ جزیرہ سقطریٰ بحر ہند میں خلیج عدن کے قریب قرن افریقہ کے ساحل پر واقع ہے اور اسی نام کے جزیرے کے جزیروں میں سے سب سے بڑا جزیرہ ہے۔ یہ چار جزیروں اور دو چھوٹے جزائر پر مشتمل ہے۔ اس میں تقریباً 50 ہزار لوگ آباد ہیں۔

غیر معمولی مقام اور پودوں کی منفرد اقسام

سقطریٰ جزیرہ نما کو 2008 سے اقوام متحدہ کی تعلیمی، سائنسی اور ثقافتی تنظیم "یونیسکو" کی فہرست میں شامل کیا گیا ہے کیونکہ یہ "اپنے پودوں کے عظیم تنوع اور مقامی پرنباتات کے تناسب کے لحاظ سے ایک غیر معمولی جگہ ہے۔

اقوام متحدہ کی ایجنسی کے مطابق جزیرہ نما عرب میں شناخت شدہ پودوں کی 825 اقسام میں سے ایک تہائی سے زیادہ کو منفرد سمجھا جاتا ہے۔ "ڈریگن کا خون" درخت، جس میں دواؤں کے فوائد ہیں سب سے زیادہ قابل ذکر ہے.

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں