روسی جوہری حملے سے جاپان جیسی تباہی ہو سکتی ہے: امریکی رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
6 منٹس read

روسی صدر ولادیمیر پوتین کی یوکرین میں فوجی کارروائی کےدوران جوہری ہتھیاروں کے استعمال کی دھمکی کی روشنی میں’سی این این‘ کی ایک رپورٹ میں کہا گیا کہ روس کے جوہری ہتھیاروں کے نظام میں 4,477 جوہری وار ہیڈز شامل ہیں۔ ان میں سے تقریباً 1,900 "نان اسٹریٹجک" وار ہیڈز ہیں۔ فیڈریشن آف امریکن سائنٹسٹس کے مطابق اسے ٹیکٹیکل نیوکلیئر ہتھیار بھی کہا جاتا ہے۔

صدر پوتین نے ایک بار پھر دھمکی دی کہ وہ جوہری ہتھیاروں کو تبدیل کر دیں گے اور غالباً جنہیں اکثر ٹیکٹیکل جوہری ہتھیار کہا جاتا ہے۔ گذشتہ ہفتے ایک تقریر میں انہوں نے خبردار کیا تھا کہ ہمارے ملک کی علاقائی سالمیت اور روس اور اپنے عوام کے دفاع کو خطرے کی صورت میں یقینی طور پراپنے پاس موجود تمام ہتھیاروں کے نظام کو استعمال کرے گا اور یہ کوئی چال نہیں ہے۔"

لیکن ٹیکٹیکل جوہری ہتھیار کیا ہے اور یہ باقاعدہ جوہری ہتھیار سے کیسے مختلف ہے؟

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ روس کا سب سے طاقتور "اسٹریٹیجک" جوہری وار ہیڈ 500 سے 800 کلوٹن کے درمیان دھماکہ خیز طاقت کا حامل ہے اور اسے پورے شہروں کو تباہ کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔

ٹیکٹیکل ہتھیاروں کے "کم دھماکے" کا حوالہ کسی حد تک گمراہ کن ہے کیونکہ 10 سے 100 کلو ٹن بارود کی دھماکہ خیز قوت اب بھی بڑی تباہی پھیلانے کے لیے کافی ہے جیسا کہ دنیا کو 1945 میں اس وقت دریافت ہوا جب امریکا نے ہیروشیما اور ناگاساکی پر ایٹم بم گرائے تھے۔جہاں وہ بم گرے وہاں بالترتیب تقریباً 15 اور 21 کلوٹن ڈائنامائٹ کے برابرتباہی پھیلی۔

ہیروشیما اور ناگاساکی میں ہونے والے ابتدائی دھماکوں میں تقریباً 35,000 اور 70,000 افراد ہلاک ہوئے۔ دسیوں ہزار بعد میں خارج ہونے والی تابکاری سے مر گئے اور یہ تفصیل امریکی حکومتی آرکائیوز میں موجود ہے۔

نیو جرسی میں سٹیونز انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی میں سائنس اور ٹیکنالوجی اسٹڈیز کے ڈائریکٹر الیکس ویلرسٹین کہتے ہیں کہ جوہری ہتھیاروں میں اصل فرق ان کے دھماکے کے معیار میں نہیں ہے بلکہ ان کے اہداف میں ہے۔ سابق امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس سمیت دیگر کا کہنا ہے کہ اس میں کوئی فرق نہیں ہے۔

اگر روس نے ایک دھماکہ کیا تو کیا ہوگا؟

رپورٹ میں جواب دیا گیا کہ روس (اور سابق سوویت یونین) نے ٹیکٹیکل جوہری ہتھیاروں کا ایک بڑا ذخیرہ بنایا اور برقرار رکھا۔ ابتدائی سوچ یہ تھی کہ میدان جنگ میں جوہری ہتھیار کے استعمال سے کمانڈروں کو فیصلہ کن حملہ کرنے کا اختیار ملے گا جو اپنے سب سے بڑے جوہری ہتھیاروں کے استعمال کے بغیر شکست سے بچ سکتا ہے، جس کے جوابی حملے کی صورت میں جوہری ہتھیاروں کا استعمال کیا جائے گا۔ اس معاملے پر فکر مند سائنسدانوں کی یونین کے مطابق یہ تہذیب کو ختم کرنے کا باعث بن سکتا ہے۔

اپنی ویب سائٹ پر، تنظیم نے محدود ٹیکٹیکل ہتھیاروں کے نقصان کو "ناقص اور خطرناک" قرار دیا ہے۔

تنظیم نے کہا ہے کہ "ٹیکٹیکل جوہری ہتھیار مزید غیر یقینی صورتحال کا باعث بنتے ہیں اور اس امکان کو بڑھاتے ہیں کہ کوئی ملک یہ سوچے گا کہ وہ محدود حملے سے بچ سکتا ہے۔

برٹش رائل انسٹی ٹیوشن (RUSI) میں موسم گرما کے دوران شائع ہونے والی تحقیق میں کہا گیا ہے کہ یورپ میں کمانڈ سینٹرز یا ایئر بیسز کے خلاف ٹیکٹیکل جوہری ہتھیاروں کا استعمال ارد گرد کے علاقوں میں شہریوں کی ہلاکتوں کو محدود کر سکتا ہے۔ مثال کے طور پر، RUSI کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ نیٹو کے اتحادی پولینڈ اور لتھوانیا کے درمیان زمینی سرحد جو کہ روس کے کیلینن گراڈ کو اس کے پڑوسی بیلاروس سے الگ کرتی ہے، سوالکی میں ٹیکٹیکل جوہری ہتھیار کا استعمال صرف سینکڑوں شہریوں کی ہلاکت کا سبب بن سکتا ہے، لیکن حقیقت اس سے بہت دور ہونے کا امکان ہے۔

یونین آف کنسرنڈ سائنٹسٹس بلاگ نے کہا کہ امریکی جنگی کھیلوں کی پیش گوئی ہے کہ ٹیکٹیکل جوہری ہتھیاروں کے استعمال پر مشتمل تنازع تیزی سے قابو سے باہر ہو جائے گا۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ پرنسٹن یونیورسٹی کی جانب سے امریکا اور روس کے درمیان تنازعہ کا تخروپن جو ٹیکٹیکل جوہری ہتھیاروں کے استعمال سے شروع ہوتا ہے تیزی سے بڑھنے کے ساتھ ختم ہوتا ہے جس سے 90 ملین سے زیادہ افراد ہلاک اور زخمی ہوں گے۔

گزشتہ ہفتے پوتین کی دھمکی کے جواب میں جوہری ہتھیاروں کے خاتمے کے لیے بین الاقوامی مہم (ICAN) نے کہا کہ 2022 میں یورپ جوہری ہتھیاروں کے استعمال کے لیے 1945 کے جاپان سے زیادہ خطرناک جگہ ہے، جس کی آبادی کم تھی اور نسبتاً الگ تھلگ تھا۔

ICANN نے اپنی ویب سائٹ پر کہا کہ آج یورپ میں ایک ہی ایٹمی دھماکے سے لاکھوں شہری ہلاک اور بہت سے زیادہ زخمی ہو سکتے ہیں۔ تابکاری بہت سے ممالک میں بڑے علاقوں کو آلودہ کر سکتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایمرجنسی سروسز مؤثر طریقے سے جواب دینے کے قابل نہیں ہوں گی اور بڑے پیمانے پر خوف و ہراس لوگوں کی بڑے پیمانے پر نقل و حرکت کا باعث بنے گا اور لوگوں کی زندگیوں پر شدید معاشی خلل پڑے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں