یوکرین میں پوتین کی فتح المیہ ہوگا: نیٹو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

نیٹو کے سیکرٹری جنرل جینز اسٹولٹن برگ نے زور دے کر کہا ہے کہ ماسکو کا یوکرینی زمینوں کو ضم کرنے کا فیصلہ دوسری جنگ عظیم کے بعد سب سے خطرناک پیش رفت ہے۔ نیٹو نے اس بات پر زور دیا کہ روسی صدر ولادیمیر پوتین کو یوکرین میں جیتنے دینا تباہ کن ہوگا۔

انہوں نے آج جمعہ کو ایک تقریر میں مزید کہا کہ اتحاد میں یوکرین کی رکنیت تمام اراکین کی متفقہ ہونی چاہیے۔ روس کی جانب سے اس کی زمینوں پر قبضے کے بعد کیف کی حمایت جاری رکھنے پر زور دیا۔

الحاق کے فیصلے کے بارے میں انہوں نے وضاحت کی کہ روس کا یہ فیصلہ دوسری جنگ عظیم کے بعد یورپی سرزمینوں کا سب سے بڑا الحاق ہے۔

'اسٹریٹجک ناکامی'

انہوں نے نشاندہی کی کہ 2014 میں جزیرہ نما کریمیا کے الحاق کے حوالے سے ماسکو دوسری مرتبہ طاقت کے ذریعے یوکرین کی زمینوں پر قبضہ کر رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یوکرینی علاقوں کو ضم کرنے کا پوتین کا فیصلہ ان کی تزویراتی ناکامی کو ظاہر کرتا ہے۔

درایں اثنا گروپ آف سیون کے وزرائے خارجہ نے جمعہ کو روس کی طرف سے یوکرین کے چار علاقوں کے الحاق کے اعلان کی مذمت کی، جبکہ ماسکو کے خلاف مزید اقدامات کرنے کا عہد کیا۔

بین الاقوامی مذمت

فرانس جرمنی، برطانیہ، یونان اور ہالینڈ نے الگ الگ بیانات میں روسی اقدام کی مذمت کی ہے۔ لندن نے روسی سفیر کو طلب کیا اور اسے الحاق کے خلاف احتجاجی مراسلہ سونپا ہے۔

اس کے علاوہ امریکی سینیٹ کی کمیٹی برائے خارجہ تعلقات نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ واشنگٹن کبھی بھی روس کے یوکرینی علاقے کے الحاق کو تسلیم نہیں کرے گا۔

جمعے کے روز ایک بیان میں، سات ممالک کے گروپ کے وزرائے خارجہ نے زور دیا کہ اس فورم کے ممالک روس کی جانب سے یوکرین کی زمینوں پر کیے جانے والے "مبینہ الحاق کو کبھی تسلیم نہیں کریں گے۔"

وزراء خارجہ نے کہا کہ ہم متفقہ طور پر یوکرین کے خلاف روس کی جارحانہ جنگ اور روس کی طرف سے یوکرین کی خودمختاری، علاقائی سالمیت اور آزادی کی مسلسل خلاف ورزی کی مذمت کرتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں