سعودی پبلک انویسٹمنٹ فنڈ نے پہلے گرین بانڈز کی فروخت شروع کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے پبلک انویسٹمنٹ فنڈ(پی آئی ایف) نے اپنے پہلے بانڈز کی فروخت کے لیے آرڈرلینا شروع کردیے ہیں۔ایک بینک کے مطابق مملکت کے خودمختاردولت فنڈ کی طرف سے یہ گرین بانڈ کا پہلا اجرا ہوگا۔اس میں اربوں ڈالر جمع ہونے کی توقع ہے۔

بینک دستاویزسے پتاچلتا ہے کہ پی آئی ایف نے گرین بانڈز کے لیے ابتدائی قیمت کی رہ نما ہدایات بھی جاری کی ہیں۔پانچ سالہ قسط کے لیے امریکی ٹریژری (یوایس ٹی)کے مطابق قریباً 150 بیس پوائنٹس، 10 سالہ بانڈز کے لیے یو ایس ٹی پرقریباً 190 بی پی ایس اور 100 سالہ حصے کے لیے قریباً 7 فی صد-7.25 فی صد ہے۔اس سے 50 کروڑڈالر جمع ہونے کی توقع ہے۔

توقع کی جاتی ہے کہ پانچ سالہ اور 10 سالہ قسطیں بینچ مارک سائز کی ہوں گی ۔اس کا عام طور پر مطلب کم سے کم 50 کروڑڈالر ہے۔دستاویز میں بتایا گیا ہے کہ اس کی کتابیں کھل چکی ہیں اور توقع ہے کہ یہ ڈیل بدھ کے روز ہی ختم ہوجائے گی۔ذرائع نے اس سے قبل کہا تھا کہ اس ڈیل سے اربوں ڈالر جمع ہونے کی توقع ہے۔

واضح رہے کہ سعودی عرب کا سرکاری سرمایہ کاری فنڈ600 ارب ڈالرسے زیادہ کے اثاثوں کا انتظام کرتا ہے۔اس کو سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے پیش کردہ ویژن2030ء میں مرکزی حیثیت حاصل ہے۔اس کے تحت سعودی عرب کاتیل کی آمدن پر انحصاربتدریج کم کرنے کے لیے وسیع تر معاشی اصلاحات پر عمل درآمد کیا جارہا ہے۔

سعودی ولی عہد نے دسمبر میں کہا تھا کہ پی آئی ایف نے گذشتہ سال قریباً 22 ارب ڈالر خرچ کیے تھے اور وہ 2022 میں مقامی سطح پرقریباً 40 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کرے گا۔

فنڈ نے 2025 تک اپنے اثاثوں کو10 کھرب ڈالر سے زیادہ تک بڑھانے کا ہدف مقرر کررکھا ہے۔اس کو توقع ہے کہ قابل تجدید توانائی ، صاف نقل وحمل اور پانی کے پائیدارانتظام سمیت سبزمنصوبوں میں 2026 تک 10ارب ڈالرسے زیادہ کی سرمایہ کاری کی جائے گی۔

بی این پی پریباس، سٹی، ڈوئچے بینک، گولڈمین ساکس اور جے پی مورگن اس معاہدے پر مشترکہ عالمی رابطہ کاراور فعال بک رنرز ہیں۔آٹھ دیگر بینک بھی فعال بک رنرز ہیں اور11 مزید بینک بھی اس ڈیل کا حصہ ہوں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں