روس اور یوکرین

روس:دھماکے سے جزوی تباہ کریمیا پل سے ریل ٹریفک بحال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جمہوریہ کریمیا کو روس کی سرزمین سے ملانے والے پُل پر ہفتے کے روز دھماکے کے بعد ریل ٹریفک بحال کردی گئی ہے۔

کریمیا اور روس کے درمیان ریل خدمات مہیا کرنے والی ’گرینڈ سروس ایکسپریس‘ نے بتایا کہ دو ٹرینیں شام کے وقت جزیرہ نما سے ماسکو اور سینٹ پیٹرزبرگ کے لیے روانہ ہوئی ہیں۔

کمپنی نے ٹیلی گرام پر کہا کہ’’ٹرینیں کریمیا پل کے اوپر سے گزریں گی‘‘۔آبنائے کرچ پرواقع پل پرہفتہ کی صبح ہونے والے دھماکے کے بعد یوکرین کے حکام نے خوشی کے پیغامات جاری کیے تھے لیکن انھوں نے اس کی براہ راست ذمہ داری قبول نہیں کی جبکہ روس نے بھی فوری طور پراس کا کسی پرکوئی الزام عاید نہیں کیا۔

روسی حکام کا کہنا ہے کہ دھماکے میں تین افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ان میں ممکنہ طورپردھماکے میں تباہ شدہ ٹرک کے قریب سفرکرنے والی ایک کار میں سوار افراد بھی شامل ہیں۔

اس دھماکے کے قریباً 10 گھنٹے کے بعد سڑک کو بھی ٹریفک کے لیے دوبارہ کھول دیا گیا ہے۔یہ پُل روسی فوج کی رسد کے لیے ایک اہم شریان کی حیثیت رکھتا ہے۔روسی فوج نے یوکرین کے جنوبی خطے خیرسن کے بیشتر حصے پر قبضہ کررکھا ہے۔یہ پُل سیفستوپول کی بحری بندرگاہ کے لیے بھی اہمیت کا حامل ہے۔اس کے گورنر نے مقامی لوگوں سے کہا:’’پرسکون رہیں اورگھبرانا نہیں‘‘۔

ابھی تک یہ واضح نہیں ہوسکا کہ آیا پُل پریہ دھماکا جان بوجھ کر کیے گئےحملے کا نتیجہ تھا، لیکن اس طرح کے ہائی پروفائل انفراسٹرکچر کو ایسے وقت میں نقصان پہنچا ہے جب روس کو میدان جنگ میں پے درپے شکستوں کا سامنا کرنا پڑا ہے اور اس واقعہ سے کریملن کے روسی عوام کو یقین دہانی کے یہ پیغامات مزید دھندلاسکتے ہیں کہ یوکرین میں تنازع ان کی منصوبہ بندی کے مطابق آگے بڑھ رہا ہے۔

کریمیا پُل پردھماکا روسی صدر ولادی میرپوتین کی 70ویں سالگرہ کے ایک روز بعد بھی ہوا تھا۔اس واقعہ کے بعد روس نے فضائیہ کے جنرل سرگئی سروفیکن کویوکرین میں روسی فوج کی قیادت کے لیے نامزد کیا ہے۔گذشتہ ایک ہفتے میں وہ روس کے تیسرے سینیرکمانڈر ہیں جن کا یوکرین میں جنگ آزما فوج میں تقرر کیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں