روس اور یوکرین

یوکرینی رہائشی عمارات پر روسی میزائل حملہ، 12 ہلاکتوں کی تصدیق

ملبہ اٹھایا جا رہا ہے۔ 49 افرد زخمی ۔ آٹھ افردا کو ملبے سے زندہ نکال لیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روسی میزائل حملے سے کم از کم بارہ یوکرینی شہری ہلاک اور قریبا 50 زخمی ہو گئے ہیں۔ جنہیں ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے۔ ان میں چھ بچے بھی شامل ہیں۔ شہری انتظامیہ کے مطابق میزائل حملےکا نشانہ بننے والی عمارتوں کا ملبہ اٹھایا جارہا ہے۔

شہری انتظامیہ کے اہلکاروں کے مطابق آٹھ افراد کو ملبے سے زیدہ ریسکیو کیا جا چکا ہے۔ تاہم ابھی خدشہ ہے کہ زخمیوں یا مرنے والوں کی تعداد مختلف ہو سکتی ہے۔

زیپوری حازیہ ریجن کے اولیکسینڈر ستارخ کے بقول رات کے وقت روس نے میزائلوں سے ایک نو منزلہ عمارت کو نشانہ بنایا۔ جودیکھتے ہی دیکھتے جزوی نقصان کا شکار ہو گئی۔ لیکن اس عمارت سے زیادہ نقصان آس پاس موجود پانچ دوسری رہائشی عمارات کو ہو ا جو مکمل طور پر ملبے کا ڈھیر بن گئیں۔'

ان کے بقول مزید کئی لوگ ابھی ملبے کے نیچے ہو سکتے ہیں۔ ستارخ نے یہ بات اپنے ٹیلی گرام کے ذریعے ایک پیغام میں کہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا ' ابھی ریسکو آپریشن جاری ہے۔'

یوکرینی صدر ولادی میر زیلنسکی نے اس واقعے میں ہونے والی ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے اور کہا ہے کہ جس نے بھی اس بے رحمانہ حملے کا حکم دیا ہے اس کو واقعے کا ذمہ دار ٹھہرایا جائے گا۔'

شہری انتطامیہ کے اہلکاروں نے کہا ' 17 افراد کی ہلاکت ہوئی ہے۔ البتہ غیر جانبدار ذرائع سے ہلاکتوں کی تعداد کی تصدیق باقی ہے۔ ی

اد رہے یہ علاقہ روس کے زیر انتظام جوہری پلانٹ سے 125 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ اس پلانٹ کو یورپ کا سب سے بڑا جوہری پلانٹ کہا جاتا ہے۔

روس اور یوکرین دونوں نے اس واقعے کی ذمہ داری ایک دوسرے پر ڈالی ہے۔ کہ جوہری پلانٹ سے زیادہ فاصلے پر نہ ہونے کی وجہ سے یہ معاملہ بہت خطرناکی کا باعث بن سکتا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں