روس اور یوکرین

یوکرین میں بنیادی ڈھانچے پرروسی حملوں کے بعد یورپ کوبجلی کی ترسیل منقطع

یوکرین کی شہری تنصیبات پر روس کے میزائل حملے’ناقابلِ قبول اشتعال انگیزی‘ ہیں:انتونیوگوتیریس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یوکرین کی وزارتِ توانائی نے توانائی کے بنیادی ڈھانچے پرروس کے میزائل حملوں کے بعد یورپی یونین کو بجلی کی ترسیل منقطع کرنے کا اعلان کیا ہے۔

وزارت نے اپنی ویب سائٹ پر ایک بیان میں کہا:’’آج (سوموار) کے میزائل حملوں میں تھرمل پیداوار کے یونٹوں اور بجلی کے سب اسٹیشنوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ان حملوں نے یوکرین کواپنے توانائی کے نظام کو مستحکم کرنے کے لیے 11اکتوبر2022 سے بجلی کی برآمدات معطل کرنے پرمجبور کردیا ہے‘‘۔

اس سے قبل روس نے پیر کے روز یوکرین پر جنگ کے آغاز کے بعد سے اب تک کے سب سےزیادہ میزائل حملے کیے ہیں،اس نے یوکرینی شہروں پر کروزمیزائلوں کی بارش کی ہے جس سے شہروں میں برقی رو معطل ہوکررہ گئی ہے۔

روسی صدر ولادی میرپوتین نے ہفتے کے روز کریمیا پُل پر تباہ کن حملے کو دہشت گردی قراردیا تھا۔انھوں نے یوکرین کی خصوصی سکیورٹی سروسز پر اس کا الزام عایدکیا تھا اور اس کابدلہ لینے کا اعلان کیا تھا۔

یوکرین کے وزیرتوانائی ہرمن ہالوشچینکو نے بتایا ہے کہ توانائی کے نظام پر میزائل حملے اب تک ’پوری جنگ کے دوران میں سب سے بڑے حملے‘تھے۔

انھوں نے ایک ٹی وی نشریے میں کہا کہ میزائل حملے توانائی کی سپلائی کے پورے نظام پرکیے گئے ہیں تاکہ سپلائی کو تبدیل کرنا ہرممکن حد تک مشکل ہوجائے۔

جون میں، یوکرین کی وزارت توانائی نے کہاتھاکہ وہ یورپی یونین سے بجلی کی برآمدات کی مد میں سال کے آخر تک ڈیڑھ ارب یورو (1.45 ارب ڈالر)کی امید کررہی ہے۔روس سے جنگ شروع ہونے کے بعد سے یورپی یونین اس کی توانائی کی اہم برآمدی مارکیٹ ہے۔

روس نے 24 فروری کو یوکرین پرفوجی چڑھائی کی تھی اور اس دوران میں اس نے بارہا اس ملک میں شہری اہداف پر حملوں کی تردید کی ہے۔


روس کے میزائل حملوں کی مذمت

دریں اثناء اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیریس نے یوکرین میں مہلک بمباری شروع کرنے پر روس کی مذمت کی ہے اور اسے’جنگ میں ناقابل قبول اشتعال انگیزی‘ قرار دیا ہے۔

انتونیوگوتیریس کے ترجمان اسٹیفن دوجارک نے ایک بیان میں کہا کہ سیکرٹری جنرل یوکرین کے مختلف شہروں پرروسی فوج کی جانب سے آج بڑے پیمانے پر کیے گئے میزائل حملوں پرگہرے صدمے میں ہیں۔ان کے نتیجے میں مبیّنہ طورپرشہری علاقوں کو بڑے پیمانے پر نقصان پہنچا ہے اور درجنوں افراد ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ’’یوکرین کی جنگ میں یہ ایک ناقابل قبول اشتعال انگیزی ہےاورہمیشہ کی طرح، ایسے حملوں کی شہریوں کو سب سے زیادہ قیمت ادا کرنا پڑ رہی ہے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں