اسپین میں بچی کی آنتوں کی پیوند کاری کا پہلا تجربہ کامیاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

میڈرڈ کے لا پاز اسپتال نے منگل کے روز کہا ہے کہ صرف ایک سال سے زیادہ عمرکی ایک اسپانوی بچی کا ایک عطیہ دہندہ سے آنتوں کی پیوند کاری کے لیے دنیا کا پہلا کامیاب آپریشن ہوا ہے۔ آنتیں عطیہ کر نے والا خود فوت ہوگیا تھا۔

دل میں خرابی

اسپتال نے ایک بیان میں مزید کہا کہ "بچی کو اب اسپتال سے ڈسچارج کر دیا گیا ہے اور وہ اپنے والدین کے ساتھ گھر میں بہترین حالت میں ہے۔"

اسپانوی وزارت صحت کے اعداد و شمار کے مطابق سپین اعضاء کی پیوند کاری میں دنیا کے سرکردہ ممالک میں سے ایک ہے، جہاں 2021 میں فی ملین افراد پر 102 سے زیادہ آپریشن ہو رہے ہیں۔

بیبی ایما کی آنتوں کی خرابی کی تشخیص اس وقت ہوئی جب وہ صرف ایک ماہ کی تھی کیونکہ اس کی آنتیں بہت چھوٹی تھیں اور اس کی صحت تیزی سے بگڑتی جا رہی تھی۔ اس کا ملٹی ویسیرا ٹرانسپلانٹ ہی اس کی زندگی بچانے کا ذریعہ تھا۔

آنتوں کے علاوہ ایما کو جگر، معدہ، تلی اور لبلبہ بھی ملا۔

اس کی والدہ نے عطیہ کرنے والے کے اہل خانہ اور ڈاکٹروں کا شکریہ ادا کرنے سے پہلے صحافیوں کو بتایا۔ "اچھی خبر یہ ہے کہ زندگی چلتی ہے اور ایما بہت بہادر ہے اور ہر روز ثابت کرتی ہے کہ وہ زندہ رہنا چاہتی ہے"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں