یمن اور حوثی

حوثیوں کا یمن کے علاقے حضرموت میں الضبہ آئل پورٹ پر حملہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

جمعہ کے روز یمن میں ایرانی حمایت یافتہ حوثی ملیشیا نے ملک کے جنوب مشرق میں حضر موت گورنری کے شہر مکلا میں الضبہ آئل پورٹ پر دو ڈرونز سے حملہ کر دیا۔

حضر موت کے گورنر مبخوت بن ماضي نے ایک ویڈیو بیان میں تصدیق کی ہے کہ دو بوبی پھنسے ہوئے حوثی ڈرونز نے مکلا کے مشرق میں الضبہ آئل پورٹ کو نشانہ بنایا۔

انہوں نے واضح کیا کہ حوثی ملیشیا نے الضبہ آئل پورٹ کو نشانہ بناتے ہوئے دو ڈرون حملے کئے اور یہ اس وقت کئے گئے جب بندرگاہ سے خام تیل کی ترسیل کرنے والے جہاز کی آمد ہوئی تھی۔

بن ماضی نے کہا کہ ڈرون کو گولی مار دی گئی اور اس حملے میں کوئی انسانی یا مادی نقصان نہیں ہوا۔ حوثیوں کا حملہ مارب اور الجوف کے درمیان والے علاقے سے کیا گیا تھا۔

حضرموت کے گورنر نے تصدیق کی کہ حکومت اور اتحادی ممالک کے ساتھ مل کر ایسے واقعات کی روک تھام کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

الشحر شہر اور بندرگاہ کے آس پاس کے مقامی باشندوں نے جمعہ کی دوپہر دو بجے دھماکوں کی آوازیں سننے کی اطلاع دی۔ جس کے بعد سیکورٹی اور فوجی دستوں نے بندرگاہ کی طرف جانے والی تمام سڑکوں کو بند کر دیا۔

یہ حملہ حوثی ملیشیا کی جانب سے بین الاقوامی تیل اور شپنگ کمپنیوں کو نشانہ بنانے کی دھمکی کے لگ بھگ دو ہفتے بعد ہوا ہے۔

حوثی گروپ نے جمعہ کے روز حضرموت گورنری میں الضبہ آئل پورٹ کو نشانہ بنانے کا اعتراف بھی کرلیا۔

گروپ کے فوجی ترجمان یحییٰ ساری نے اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر بیان میں کہا کہ گروپ کی فورسز نے ایک "ہلکی انتباہی چوٹ " لگائی ہے تاکہ ایک تیل بردار جہاز کو روکا جا سکے جو حضرموت میں الضبہ کی بندرگاہ سے خام تیل لوڈ کرنے کی کوشش کر رہا تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ حوثی گروپ مستقبل میں "کسی بھی جہاز کو روکنے سے دریغ نہیں کرے گا"۔

حملے کی مذمت کرتے: یمنی وزیر اطلاعات

یمن کے وزیر اطلاعات معمر العریانی نے جمعہ کو کہا کہ یمنی حکومت حوثی گروپ کی جانب سے دو ایرانی ساختہ ڈرونز کے ذریعے حضرموت گورنری میں الضبہ بندرگاہ کو نشانہ بنانے کی کوشش کی بھرپور مذمت کرتی ہے۔

انہوں نے کہا یہ اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ حوثی گروپ یمنی بحران کے پرامن حل کو ناکام بنانے کی راہ پر گامزن ہے۔

العریانی نے مزید کہا کہ یہ کوشش حوثی گروپ کی جانب سے بحیرہ احمر، باب المندب اور بحیرہ عرب کو فوجی آپریشن کا علاقہ قرار دینے اور تیل کی تنصیبات، تجارتی بحری جہازوں اور آئل ٹینکرز کو نشانہ بنانے کی دھمکی کے بعد سامنے آئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ حملہ اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ ایرانی رجیم حوثی گروپ کو "سلامتی اور استحکام کو غیر مستحکم کرنے، یمن اور خطے میں افراتفری اور دہشت گردی کو برآمد کرنےاور شپنگ لین اور توانائی کی سلامتی کو خطرے میں ڈالنے کے لیے ایک گندے آلے کے طور پر استعمال کر رہی ہے"

انہوں نے کہا کہ حوثی گروپ کا یمن کی اہم ترین بندرگاہوں مںی سے ایک الضبہ بندرگاہ پر حملہ حوثی ملیشیا کے دائرہ کار میں توسیع کی نمائندگی کرتا ہے ۔ حوثی اب ان اہم تنصیبات کو بھی نشانہ بنا رہے ہیں جو آٹھ سال سے جنگ سے باہر تھیں۔

انہوں نے عالمی برادری اور اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا کہ وہ حوثیوں کے حملوں کی استعداد میں اس خطرناک اضاقہ کی مذمت کریں اور تہران حکومت اور اس کے "حوثی ٹولز" کی سرگرمیوں کا مقابلہ کرنے کے لیے اپنی قانونی ذمہ داریاں نبھائیں۔

حوثیوں سے نمٹنے کیلئے تمام راستے کھلے ہیں: یمنی حکومت

الضبہ آئل پورٹ پر حملے کے رد عمل میں یمنی حکومت نے کہا کہ حوثی دہشت گردانہ حملے سے نمٹنے کے لیے تمام آپشنز کھلے ہیں۔

یمنی حکومت نے تمام ممالک سے مطالبہ کیا کہ وہ اس دہشت گردانہ کارروائی اور اس کے پیچھے بدمعاش ایرانی حکومت کی مذمت کریں اور ان کے خلاف سخت اقدامات کریں۔

حکومت نے خبردار کیا ہے کہ اگر اس دہشت گردانہ رویے اور عمل کی مذمت نہ کی گئی اور اس سے بچنے کیلئے سخت کارروائی نہ کی گئی تو اس سے یمن میں امن عمل اور عالمی توانائی مارکیٹ کے استحکام پر منفی اثرات مرتب ہوں گے۔

حکومت نے کہا حالیہ حوثی حملے واضح طور پر دہشت گرد ملیشیا کے جنگ کے مزید مجرمانہ مرحلے کے آغاز کا بتا رہے ہیں۔ اس طرح کے حملوں سے یمن میں انسانی بحران بڑھے گا اور بین الاقوامی نیویگیشن کی سلامتی میں بھی خلل آئے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں