ایران:شیراز میں عبادت گزاروں پر مسلح حملہ آوروں کی فائرنگ؛15 افراد ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ایران کے شہر شیراز میں ایک شیعہ زیارت گاہ میں عبادت گزاروں پر تین مسلح افراد کی فائرنگ کے نتیجے میں 15 افراد ہلاک اور 10 زخمی ہوگئے ہیں۔

ایران کی سرکاری خبررساں ایجنسی ’ارنا‘ کے مطابق بدھ کو یہ واقعہ مقامی وقت کے مطابق شام 5 بج کر 45 منٹ پر شیراز میں واقع مزار شاہ چراغ میں پیش آیا ہے۔

ارنا کے مطابق فائرنگ کرنے والے دوحملہ آوروں کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور تیسرے کو گرفتار کرنے کی کوششیں جاری ہیں۔نیم سرکاری خبر رساں ایجنسی 'فارس' کے مطابق گرفتار کیے گئے دونوں حملہ آور ایرانی نہیں ہیں لیکن اس نے ان کی قومیت کی وضاحت نہیں کی ہے۔

ایک اورنیم سرکاری خبر رساں ایجنسی تسنیم نے ایک نامعلوم سکیورٹی ذریعے کے حوالے سے بتایا ہے کہ حملہ آور 'تکفیری' تھےجنھوں نے ملک میں جاری بدامنی کا فائدہ اٹھاتے ہوئے یہ حملہ کیا ہے۔ایرانی میڈیا اور حکومت ’تکفیری‘ کی اصطلاح سنی انتہاپسندوں کے لیے استعمال کرتی ہے۔

22سالہ مہسا امینی کی تہران میں پولیس کے زیر حراست ہلاکت کے بعد 16 ستمبر سے حکومت مخالف مظاہرے جاری ہیں۔ان میں ایرانی خواتین پیش ہیں اور ان مظاہروں نےایران کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔

انسانی حقوق کی تنظیموں کے مطابق احتجاجی مظاہروں کے دوران میں کریک ڈاؤن کی کارروائیوں میں 200 سے زیادہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں اور ہزاروں کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں