روس اور یوکرین

روس اور ایران کے "اتحاد" کے سامنے اسرائیل کی "غیر جانبداری" پر یوکرینی صدر سخت ناراض

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے پیر کے روز اسرائیل کو سخت تنقید کا نشاہ بنایا ہے۔ انہوں نے اپنے کہا کہ یوکرین پر روس کے حملے کے تناظر میں "اسرائیل غیر جانبدار ہے جس نے ان کی رائے میں ماسکو اور تہران کے درمیان "اتحاد" کے قیام کی اجازت دی، خاص طور پر روسی فوج کو ایرانی ڈرون فراہم کرنےپرخاموشی اختیار کررکھی ہے۔

اسرائیلی اخبار’ہارٹز‘ کے زیر اہتمام ایک کانفرنس کے دوران بات کرتے ہوئے زیلنسکی نے کہا کہ "یہ (روسی-ایرانی) اتحاد نہ ہوتا، اگر آپ کے سیاستدان اس وقت کوئی فیصلہ لیتے، جس کا ہم نے مطالبہ کیا تھا،" کیف کا مطالبہ ہے کہ وہ روس کے خلاف اسرائیل کی حمایت حاصل کرے۔

انہوں نے کہا کہ ماسکو اور تہران کے درمیان تال میل کریملن کو پریشان نہ کرنے کے (اسرائیلی) فیصلے کے بعد ممکن ہوا" 2014 تک روس کی طرف سے کریمیا کو الحاق کرنے کے بعد اچھے سفارتی تعلقات کو برقرار رکھنے کے لیے اسرائیل نے ماسکو کے حوالے سے نرمی اختیار کرکھی ہے۔

زیلنسکی کا یہ بیان یہ تقریر یکم نومبر کو اسرائیل میں غیر حتمی قانون سازی کے انتخابات سے کچھ دن پہلے آیا ہے۔

ایران کے جوہری پروگرام کی حمایت کے بدلے ڈرونز

یوکرینی صدر نے الزام لگایا کہ ایران نے "تہران کے جوہری پروگرام میں روس کی مدد" کے بدلے روس کو ڈرون فراہم کرنے پر رضامندی ظاہر کی۔ انہوں نے کہا کہ شاید یہ ان کے اتحاد کا یہی مفہوم ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ یوکرین کے پاس اب بھی جدید اور موثر فضائی دفاعی اور میزائل شکن دفاعی نظام موجود نہیں ہے جس سے ہماری فضائی حدود کی حفاظت کو یقینی بنایا جا سکے۔ یہی وجہ ہے کہ روس کو امید ہے کہ وہ زمین پر اپنے نقصانات کی تلافی کے لیے فضا سے دھمکیوں کا سہارا لے گا۔ انہوں نے کہا کہ "جنگ کے آٹھ ماہ میں روس نے ہمارے خلاف تقریباً 4500 میزائل استعمال کیے اور ان کے میزائلوں کا ذخیرہ کم ہو رہا ہے۔"

زیلنسکی نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ "روس نے اسے تقریباً دو ہزار ایرانی شاہد (ڈرونز)" فراہم کرنے کی درخواست کی جو کہ خودکش ڈرون ہیں۔ یوکرین پر روسی حملے میں مدد کرتے ہیں۔ روس دوسرے ممالک میں سستے داموں ہتھیاروں کی تلاش کے لیے گیاتاکہ اپنی دہشت گردی جاری رکھ سکے مگر اسے اس میدان میں صرف ایران ملا ہے۔

یوکرین کے صدر نے یہ واضح نہیں کیا کہ آیا اس نمبر میں کوئی نیا آرڈر شامل ہے یا اس کا مطلب ایرانی ڈرونز کی کل تعداد ہے جو ماسکو نے تہران سے خریدے تھے۔ کیف کے مطابق ان میں سے کچھ توانائی کے بنیادی ڈھانچے کو نشانہ بنانے کے لیے استعمال کیے گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں