12 شامیوں کو یورپ سمگل کرنے والی ویگن کی بلغارین پولیس کار کو ٹکر، متعدد زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

بلغاریہ کے دارالحکومت کے نزدیک ایک ویگن اور پولیس کار کا تصادم ہو گیا۔ یہ ویگن 12 شامی شہریوں کو سمگل کر کے لے جارہی تھی۔ ویگن ڈرائیور تصادم کے بعد پولیس چیک پوائنٹ سے فرار ہو گیا۔

گاڑیوں کے تصادم کے نتیجے میں ایک پولیس افسر اور بعض مسافر زخمی ہو گئے۔ نقل مکانی کر کے یورپی ملکوں کی طرف آنے والے لوگوں کی تعداد میں کافی اضافہ ہو گیا ہے جو یورپی ملکوں کی سرحد عبور کر کے ان یورپی ملکوں میں داخل ہونے کی کوشش کرتے ہیں۔ جنہیں مغربی یورپ میں ویزہ فری زون مانا جاتا ہے۔

ایسے ہی نقل مکانی کرکے آنے والے شامی ایک منی بس یعنی ویگن پر سوار تھے۔ ویگن کے ڈرائیور کو پولیس چیک پوائنٹ پر روکا گیا تو اس نے گاڑی روکنے سے انکار کر دیا اور گاڑی کی رفتار بڑھاتے ہوئے بھاگنے کی کوشش کی۔ اسی دوران اس کی ٹکر پولیس کار سے ہو گئی۔

اس تصادم کے نتیجے میں 51 سالہ پولیس اہلکار اور 20 سالہ شامی زخمی ہو گئے۔ سینٹ اینی ہسپتال کے مطابق ان کے علاوہ تین معمولی زخمیوں کو بھی ہسپتال لایا گیا ہے۔

ویگن چلانے والا بلغارین ڈرائیور بھی زخمی ہو گیا۔ ڈرائیور کے بارے میں معلوم ہوا ہے کہ پولیس ریکارڈ کے مطابق وہ پہلے بھی بغیر لائسنس کے گاڑی چلاتا رہا ہے۔

بلغاریہ کے سیکرٹری داخلہ نے پولیس اہلکاروں کے زخمی ہونے پر اپنے عہدے سے استعفا دینے کا عندیہ دیا ہے کیونکہ ان کے مطابق ملک میں انسانی سمگلنگ روکنے کے لیے سخت قوانین نہیں بنائے جا رہے ہیں۔

سیکرٹری داخلہ نے کہا معمولی جرمانہ دے کر ایسے لوگ بھاگ جاتے ہیں۔ واضح رہے ماہ اگست میں بھی انسانی سمگلنگ میں ملوث والی ایک بس نے پولیس کے دو افسروں کو اس وقت کچل کر ہلاک کر دیا تھا جب بس کو پولیس نے روکنے کی کوشش کی تھی۔

اسی ماہ کے شروع میں ایک پولیس اہلکار اس وقت مارا گی جب وہ ترک سرحد کے ساتھ گشت کر رہا تھا۔ بلغاریہ کی ترکیہ کے ساتھ 269 کلومیٹر لمبی سرحد ہے۔

رواں سال جنوری سے اب تک بلغاریہ نے14427 غیر ملکیوں کو غیر قانونی طور پر ملک میں داخل ہونے کی کوشش کے دوران گرفتار کیا ہے۔ پچھلے سال ایسے افراد کی گرفتاریوں کی تعداد 8254 رہی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں