'نحن الامارات' متحدہ امارات نے 2031 تک ہمہ جہت ترقی کا ویژن پیش کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

متحدہ عرب امارات کی ہمہ جہت تعمیر و ترقی کے لیے دبئی کے حکمران شیخ محمد بن راشد المکتوم نے 2031 تک کے لیے ایک جامع ویژن پیش کر دیا ہے۔ ویژن 2031 کو 'نحن الامارات ' یعنی 'ہم امارات ' کا عنوان دیا گیا ہے۔ جس کا بنیادی مقصد عرب امارات کو عالمی شراکت دار ریاستی شناخت، ایک پر کشش اور بااثر اقتصادی مرکز کے طور پر سامنے لانا ہے۔

'نحن الامارات ' کے تحت اقتصادی منزل کے طور اپنی پوزیشن کو برقرار رکھنا، معاشی خوشحالی، سماجی بہبود اور انسانی وسائل و سرمائے کی ترقی اگلے پچاس برسوں کے لیے اہم ترین اہداف ہوں گے۔ نیز 'نحن الامارات' کے عنوان سے پیش کیا جانے والا یہ ویژن 2071 میں متحدہ امارات کے سو سال مکمل ہونے تک مجموعی اماراتی ویژن کی ایک کڑی کے طور پر آگے بڑھے گا۔

اگلے دس برسوں پر مرکوز اس ویژن کی اولین اور فوری ترجیحات میں معیشت، معاشرہ، ماحولیاتی نظم اور سفارتی میدان میں مزید پیش رفت شامل ہیں۔ شیخ محمد بن راشد المکتوم نے ویژن 2031 نحن الامارات پر دستحط کرکے اسے ایک اہم سرکاری دستاویز بناتے ہوئے اس امر کی بھی توثیق کی کہ امارات اگلے پچاس برسوں کے دوران بین الاقوامی سطح پر ایک موثر اقتصادی شراکت دار کے طور پر اپنے ترقیاتی ماڈل پر فوکس کرے گا۔'

خیال رہے دبئی کے حکمران شیخ محمد بن راشد المکتوم متحدہ عرب امارات کے وزیر اعظم بھی ہیں۔ اس لیے اماراتی حکومت کی سالانہ اجلاس کی صدارت کر رہے تھے۔ اس سے قبل اماراتی کابینہ کی طرف سے 2017 میں ایک بڑے منصوبے کی منظوری دی گئی تھی، جو بنیادی طور پر 2071 میں امارات کے سو سال مکمل ہونے تک کے تمام برسوں پر محیط منصوبہ ہے۔

اب ملک کی تعلیمی ضروریات، معاشی اہداف، ترقیاتی ترجیحات اور امارات کی نئی نسل کے حوالے س اماراتی قیادت کے تصورات کو عملی شکل دینے کا منصوبہ بنایا گیا ہے۔

دبئی کے حکمران نے اس بارے میں کہا 'یہ حکومت کے لیے طویل مدتی ایک اور ایک واضح نقشہ کار ہے، ہماری نئی نسلوں کو اچھے مستقبل کے لیے مضبوط بنیادوں کی ضرورت ہو گی جو ہم ان کے لیے آج فراہم کر رہے ہیں۔' شیخ محمد بن راشد نے سوشل میڈیا پر اس بارے میں اپنی ایک پوسٹ میں کہا ہے 'ہم انہیں آگے بڑھنے اور ترقی کا سازگار ماحول دینا چاہتے ہیں۔ یہ وہ چیز ہے جو ہم آج سوچ رہے ہیں۔'

'نحن الامارات 2031' کی لانچنگ کے لیے تقریب میں ولی عہد دبئی شیخ حماد بن محمد بن راشد الکتوم ، شیخ مکتوم بن محمد بن راشد المکتوم، دبئی کے نائب حکمران اور وزیر خزانہ شیخ عمار بن حمید النعیمی، شیخ ممد بن حمد الشرقی، شیخ محمد بن سعود، شیخ سلطان بن احمد القاسمی و دیگر حکام نے شرکت کی۔

سرکاری خبر رساں ادارے کے مطابق اس ویژن میں بنیادی طور پر جن نکات کو اہم سمجھا گیا ہے ان میں ایک ترقی یافتہ معاشرہ سب سے پہلے ہے۔ اس میں ایک بنیادی فیملی یونٹ کی تعلیم وصحت اولین ہدف ہیں۔

دوسرا اہم نکتہ ایک ترقی یافتہ معیشت ہے۔ تاکہ نئی خوشحالی کا یہ اماراتی سفر پورے استحکام کے ساتھ جاری رکھا جاسکے۔ اس مقصد کے لیے تیل کی پیداوار اور برآمدکے علاوہ دیگر برآمدات کو اپنی معاشی ترقی میں اہم ستون کے طور پر کھڑا کرنا ہے۔

اس سلسلے کا اہم معاشی ہدف ملکی شرح نمو کو 816 ارب ڈالر تک لانا اور تیل کے علاوہ برآمدی ہدف 217 ارب ڈالر تک لانا ہے۔ نیز تجارتی حجم کو اس دورانیے میں 1،08 ٹریلین ڈالر تک پہنچانا ہے۔

ویژن کا تیسرا اہم نکتہ سفارتی پالیسی سے متعلق ہے۔ امارات کی قیادت کا ویژن یہ ہے کہ متحدہ عرب امارات کو عالمی سطح پر ایک مضبوط موثر اور اہم شناخت کے طور پر سامنے لائے۔ اپنی اتحادی اقوام کے ساتھ مل کر عالمی سطح پر اور علالقے کی سطح پر امن و تعاون کو فروغ دیا جائے گا۔

ویژن 2031 کے دیگر دو نکات میں ماحولیاتی نظم کو آگے بڑھانا تاکہ نئی نسلوں کو صحت مندانہ ماحول فرام ہو۔ اس ویژن کا آخری نکتہ فوڈ سکیورٹی کے اہداف کا حصول ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں