مسلسل بائیس منٹ تک حرکت قلب بند رہنے کے باوجود زندہ تیراک جومانا یاسر سے ملیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

مصرمیں ایک لڑکی کے حرکت قلب کے بائیس منٹ تک بند رہنے کے بعد اس کے زندہ ہونے پر لوگ حیرن ہیں۔ مصری ٹرائیتھلون چیمپئن جومانہ یاسر حرکت قلب بند رہنے کے بعد مسلسل بائیس منٹ تک بے ہوش رہیں مگر اس کے بعد انہیں ہوش آگیا۔

جومانہ یاسر ٹرائیتھلون میں مصری چیمپئن ہیں جو گذشتہ ستمبر میں صحت کےعارضے کا شکار ہوئیں جب ان کا دل بند ہو گیا۔ انہون نے بتایا کہ ایسا اس وقت ہوا جب وہ تیراکی کی مشقیں کر رہی تھیں۔

جومانا نے مزید کہا کہ وہ اچانک ہوش کھو بیٹھیں اورجب ہوش آیا تو وہ اسپتال میں تھیں۔

انہوں نے ایک ٹیلیویژن انٹرویو میں وضاحت کی کہ کبھی یاد نہیں کہ اس رات مجھے کس چیز کا سامنا کرنا پڑا اور جو کچھ میرے ذہن میں آتا ہے وہ یہ ہے کہ وہ ہوش کھو بیٹھی تھی اور پھر اسپتال کے بستر پر تھی جب ہوش آیا۔

دوسری طرف جومانہ کے والد یاسر عبداللطیف نے انکشاف کیا کہ ان کی بیٹی کے ساتھ جو ہوا یہ جان کر وہ ناقابل بیان حد تک صدمے میں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میری زندگی کا یہ مشکل ترین لمحہ تھا جب میری بیٹی بے ہوش تھی۔

پھر اس نے مصری بولی میں مزید کہا کہ "میں پریشان تھا کیونکہ جومانہ اسپتال میں داخل ہونے کے پہلے 7 دنوں میں مکمل طور پر بے ہوش تھی۔

بغیر نبض کے 22 منٹ

اسپتال میں انتہائی نگہداشت کے مشیر ڈاکٹر محمد عفیفی جو اس کے کیس کو شروع سے ڈیل کررہے تھے نے وضاحت کی کہ جومانہ کے دل کی بحالی 22 منٹ تک جاری رہی۔ اس دوران وہ زندگی میں واپس آگئی اور اس کی حالت مستحکم رہی۔ اس کی حالت مستحکم ہونے تک اسے انتہائی نگہداشت وارڈ میں رکھا گیا۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ ڈاکٹر دماغی خلیات کو مصنوعی تنفس کے ذریعے محفوظ رکھنے کے بعد ادویات کے ذریعے دباؤ کومستحکم کرنے کے ساتھ ساتھ جسم کے درجہ حرارت کو کم کرنے اور دماغ بحال کرنے میں کامیاب رہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں