ایران:اسرائیل کے لیےکام کرنے کے جُرم میں دوافراد کو پھانسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ایران میں اسرائیل کے ساتھ تعاون کرنے کے جرم میں دو افراد کو تختہ دارپرلٹکادیا گیا ہے۔انھیں کرج شہرکی جیل میں جمعہ کو پھانسی دی گئی ہے۔

انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی تنظیم 'ہرانا' کے مطابق میلاد اشرفی اعتبتان اورمنوچہرشاہ بندی کو جون میں اسرائیل کے لیےمبیّنہ طور پرکام کرنے کے الزام میں گرفتارکیا گیا تھااورعدالت نے مقدمے کی سماعت کے بعد انھیں سزائے موت سنائی تھی۔

ایرانی حکام نے اس رپورٹ پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔ایران کی نیم سرکاری خبررساں ایجنسی مہر کی رپورٹ کے مطابق عدالتِ عظمیٰ نے بدھ کے روز اشرفی اعتبتان اورشاہ بندی سمیت چارافراد کی سزائے موت کوبرقراررکھاتھا۔

مہر نے اس کے ساتھ یہ دعویٰ کیا تھا کہ’’صہیونی انٹیلی جنس سروس کی رہ نمائی میں ٹھگوں کا یہ نیٹ ورک نجی اورعوامی املاک کوتباہ کررہا تھا،لوٹ مارکررہا تھا،لوگوں کواغوا کر رہا تھا اورجعلی اعترافات حاصل کررہا تھا‘‘۔

تین دیگر افراد کو ملک کی قومی سلامتی کے منافی جرائم کے ارتکاب،اغوا کی وارداتوں میں ملوّث ہونے اوراسلحہ رکھنے کے الزام میں پانچ سے دس سال تک قید کی سزا سنائی گئی تھی۔

واضح رہے کہ ایران اسرائیل کو تسلیم نہیں کرتا اور ماضی میں اس پراپنی جوہری تنصیبات پر حملوں اورملک کے اندر قتل و غارت گری کے الزامات عاید کرتارہا ہے۔ایرانی حکام نے ملک میں جاری بدامنی میں اسرائیل کے ملوّث ہونے کا بھی الزام عایدکیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں