روس اور یوکرین

پوتین بمباری کے بعد پہلی مرتبہ کریمیا پُل پہنچ گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روسی میڈیا کے مطابق 8 اکتوبر کو کریمیا پُل پر یوکرین کے حملے کے بعد پہلی مرتبہ روسی صدر پوتین نے اس پُل کا دورہ کیا ہے۔ ایک ویڈیو کلپ میں دکھایا گیا کہ پوتین کئی کارکنوں کے ساتھ پل عبور کر رہے ہیں۔ ایک اور ویڈیو میں روسی صدر کو حال ہی میں بحال کیے گئے پُل پر گاڑی چلاتے ہوئے بھی دکھایا گیا۔

ماسکو نے الزام لگایا تھا کہ اس حملے کا ماسٹر مائنڈ یوکرینی انٹیلی جنس ہے۔

روسی فیڈرل سکیورٹی سروس جس نے سوویت انٹیلی جنس سروس (کے جی بی) کی جگہ لی ہے، نے اعلان کیا کہ اس نے اس اہم پل کو تباہ کرنے والے دھماکے کے سلسلے میں پانچ روسیوں اور یوکرین اور آرمینیا کے تین شہریوں کو گرفتار کیا ہے۔

دوسری جانب یوکرین نے ان الزامات کی تردید کی ہے تاہم اس کے بعض عہدیداروں نے حملے سے ہونے والے نقصان پر جشن منایا تھا۔

لاجسٹک اہمیت

واضح رہے یہ 19 کلومیٹر طول گاڑی اور ریلوے پل جس کا افتتاح روسی صدر پوتین نے 2018 میں کیا تھا ایک عظیم الشان منصوبہ ہے جو روسی افواج کے لیے بڑی لاجسٹک اہمیت کا حامل ہے۔ اس کے ذریعے جنوبی یوکرین میں لڑنے والی ٹیموں کو رسد پہنچایا جاتا ہے۔

دھماکے سے پل کا کچھ حصہ تباہ ہوگیا جس کے باعث ٹریفک کی آمدورفت عارضی طور پر بند ہوگئی تھی۔

اس پل کو تباہ کرنے کی کارروائی کے بعد روس نے پر تشدد جواب دیا تھا اور کیف اور یوکرین کے دیگر شہروں پر سینکڑوں میزائل برسائے اور بنیادی ڈھانچے کو نشانہ بنایا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں