روس اور یوکرین

یوکرین میں امریکاکاپیٹریاٹ میزائل دفاعی نظام جائز ہدف ہوگا:روس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روس نے دھمکی دی ہے کہ اگرامریکا یوکرین کو پیٹریاٹ میزائل دفاعی نظام مہیّا کرتا ہے تو وہ فوج کے کیف کے خلاف فضائی حملوں کو جائزہدف ہوگا۔

تین امریکی عہدے داروں نے خبررساں ادارے رائٹرزکو بتایا کہ واشنگٹن پیٹریاٹ میزائل دفاعی نظام کو یوکرین بھیجنے کے منصوبوں کوحتمی شکل دے رہا ہے اوراس فیصلے کا اعلان رواں ہفتے کے اوائل میں کیا جا سکتا ہے۔

کریملن کے ترجمان دمتری پیسکوف نے بدھ کو ایک بیان میں کہا کہ یوکرین میں’’پیٹریاٹ یقینی طور پرروس کاہدف ہوں گے،لیکن وہ غیرمصدقہ میڈیا رپورٹس پر تبصرہ نہیں کریں گے‘‘۔

پیٹریاٹ کو جدید ترین امریکی فضائی دفاعی نظاموں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔یہ لڑاکاطیاروں ،کروز میزائلوں اوربیلسٹک میزائلوں کے حملوں کوروکنے کی صلاحیت رکھتاہے۔اس میں عام طورپرریڈار اوردیگرمعاون گاڑیاں کے ساتھ لانچر شامل ہوتے ہیں۔

پینٹاگون کا کہنا ہے کہ یوکرین میں روس کی جانب سے میزائل حملوں میں حالیہ اضافے کامقصد جزوی طور پرکیف کی فضائی دفاع کی صلاحیت کوختم کرنا ہے تاکہ وہ ملک کی فضائی حدود پرغلبہ حاصل کر سکے اور بیرون ملک سے آنے والی فضائی مدد کو روک سکے۔اسی وجہ سے امریکااوراس کے اتحادی کیف کومزید فضائی دفاع نظام مہیا کرنا چاہتے ہیں۔

امریکاکے یوکرین کو مہیا کردہ اسلحہ اور دفاعی نظاموں میں ناسامس فضائی دفاعی نظام بھی شامل ہے جس کے بارے میں پینٹاگون کا کہنا ہے کہ اس نے یوکرین میں روسی میزائلوں کوبےعیب طریقے سے روکا ہے۔امریکا اب تک یوکرین کو 19.3 ارب ڈالر کی فوجی امدادمہیّا کرچکا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں