18 سالہ طالبہ اندرا امبیو مس فرانس 2023 بن گئی

اس سال مقابلے کے شرکا کی اہلیت میں نرمی برتی گئی، قد کی حد اور بچوں کے نہ ہونے کی شرط ختم کردی گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فرانسیسی نوجوان خاتون، اندرا امبیو، جو ایک 18 سالہ کمیونیکیشنز کی طالبہ ہیں، کو ہفتے کی شام مس فرانس 2023 بن گئیں۔ اس سال منتظمین نے مقابلہ میں شرکت کرنے والوں کی اہلیت کے معیار میں ترمیم کی تھی جسے اہلیت کے تقاضوں میں قدرے نرمی شمار کیا گیا۔

امبیو مس گواڈیلوپ نے کہا کہ ایسا لگ رہا ہے کہ سابق ٹائٹل ہولڈر ڈیان لیر سے چاندی اور نیلے رنگ کا تاج پہن کر میں دن کا خواب دیکھ رہی ہوں۔

مقابلے کے دوران، امبیو نے کینسر میں مبتلا خواتین کا دفاع کیا، اور قطر 2022 ورلڈ کپ کے فائنل میں اتوار کے روز ارجنٹائن کے خلاف میچ سے پہلے فرانس کی قومی فٹ بال ٹیم کی حوصلہ افزائی کی۔ انہوں نے اپنی تقریر کا اختتام جملے "Allez les Bleus!" کے ساتھ کیا۔ اس جملہ کا مرغوں کو خوش کرنے کے طور پر استعمال معروف ہے۔

اس سال کے مقابلے میں مقابلہ کرنے والوں کے لیے اہلیت کی شرائط میں نرمی دیکھنے میں آئی، اس سے قبل مقابلے کے شرکا کیلئے یہ ضروری تھا کہ ان کی عمریں 18 سے 24 سال کے درمیان ہوں، ان کی اونچائی 1.70 میٹر سے کم نہ ہو، اور وہ بچوں کے بغیر ہوں۔

نئی شرائط کے مطابق 18 سال یا اس سے زائد عمر کی کوئی بھی فرانسیسی خاتون فہرست کی لمبائی یا خاندانی حیثیت سے متعلق کسی شرط کے بغیر مقابلے میں حصہ لے سکتی ہے۔ مقابلے کی تاریخ میں پہلی بار جسم پر ٹیٹو بنوانے کی بھی اجازت ہے۔

مس فرانس آرگنائزنگ باڈی کی سربراہ الیکسیا لاروشے جوبرٹ کے مطابق اس سال سول رجسٹریوں میں بطور خواتین رجسٹرڈ ٹرانس جینڈر خواتین کو بھی مقابلہ میں شرکت کی اجازت تھی۔
غیر معمولی طور پر خوبصورت شام میں مختلف کپڑوں میں ٹیلنٹ اور پرفارمنس کے مظاہرے کو بھی مقابلے کا حصہ بنایا گیا۔ مقابلہ میں شام کے کپڑے اور ساحلی لباس میں بھی پرفارمنس دکھانا شامل تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں