فلسطینی نژاد فرانسیسی وکیل صلاح الحموری کے خلاف اسرائیلی اقدام جنگی جرم ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ نے اسرائیل کی طرف سے انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے فلسطینی نژاد وکیل صلاح الحموری کو اسرائیل سے ڈیپورٹ کرنے کو جنگی جرم قرار دیا ہے۔ 37 سالہ حموری کو اسرائیلی قابض اتھارٹی نے اتوار کے روز ڈی پورٹ کر کے فرانس بھیج دیا تھا۔

صلاح الحموری کے ساتھ ان کی اہلیہ کو بھی ڈی پورٹ کیا گیا ہے۔ ان دونوں کے خلاف کوئی قانون کی خلاف ورزی کا الزام تک نہیں تھا، اس کے باوجود انہیں اسرائیل سے نکال دیا گیا۔ اسرائیل کے اس قانون کے تحت اسرائیل کسی بھی شخص کو مشکوک قرار دے کر ڈی پورٹ کر سکتا ہے اور اگلے چھ ماہ تک اسرائیل میں داخلے سے روک سکتا ہے۔

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے ترجمان جریمی لارنس نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے' صلاح الحموری کو اس طرح بلا جواز ڈی پورٹ کیا جانا اسرائیل کی طرف سے چوتھے جنیوا کنونشن کی خلاف ورزی ہے۔ جنیوا کنونشن ایسی کارروائی کو جنگی جرم قرار دیتا ہے۔

اسرائیل کا موقف ہے کہ الحموری پاپولر فرنٹ آف لبریشن فلسطین (پی ایف ایل پی ) کے ممبر ہیں۔ تاہم الحموری نے ایسے کسی بھی تعلق کی تردید کی ہے۔

جریمی لارنس کا کہنا ہے ہمیں الحموری کے خلاف اسرائیلی اقدام پر سخت تشویش ہے۔ کیونکہ وہ مشرقی مقبوضہ یروشلم میں انسانی حقوق کے لیے کام کر رہے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں