سعودی بینک 2023 میں لیکویڈیٹی کی ضروریات کو ترجیح دیں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب میں آڈٹ، ٹیکس اور مشاورتی خدمات فراہم کرنے والے معروف ادارے کے پی ایم جی کے مطابق،مملکت میں بینکوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ آمدنی میں اضافے کے باوجودآیندہ سال کے لیے اپنی لیکویڈیٹی کے مطالبات کو ترجیح دیتے رہیں گے، جس کے ذریعے قرضوں کے اجراء، خاص طور پرصقوق کی شکل میں سرمایہ بڑھانے پر توجہ مرکوز کی جائے گی۔

سال 2022 کے پہلے نوماہ میں 3.8 ارب ڈالرجاری کیے جا چکے ہیں اورآیندہ مہینوں میں اس میں اضافے کی توقع ہے کیونکہ بینک سرکاری اور نجی شعبے میں بڑھتی ہوئی طلب کومہمیزدے رہے ہیں۔

کے پی ایم جی کے الریاض دفتر کے منیجنگ پارٹنر خلیل ابراہیم السدیس نے اس ضمن میں تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ’’بینکنگ کے شرکاء میں سطح اول کے سرمایہ کے اجراء میں اضافہ نوٹ کیا گیا ہے کیونکہ بینک اپنی ایکویٹی بیس کو مزید مضبوط بنارہے ہیں‘‘۔

سعودی عرب میں کے پی ایم جی میں مالیاتی خدمات کے سربراہ اویس شہاب نے کہا کہ ’’بینکوں کواپنے باسل 4 پروگراموں پرنظرثانی کرتے ہوئے اہم چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے‘‘۔انھوں نے کہا کہ مملکت میں بینکوں کواس بات کویقینی بنانے کی ضرورت ہوگی کہ وہ سعودی کے مرکزی بینک (ساما) کے مطلوبہ نظام الاوقات کے اندرتعمیل حاصل کرنے کواچھی طرح سے تیار ہیں۔

2022ء کی تیسری سہ ماہی کی ’بینکنگ پلس‘رپورٹ میں کے پی ایم جی نے مملکت کے بینکاری کے شعبے میں ہونے والی تازہ پیش رفت پرروشنی ڈالی گئی ہے۔اس سے نوماہ کی مالی کارکردگی کے تجزیے سے صنعت کی مضبوط کارکردگی کی عکاسی ہوتی ہے، خاص طور پر خالص منافع میں سال بہ سال 26.21 فی صداضافہ ہوا ہے۔اس سے 2022 کے پہلے نو ماہ میں 12.33 ارب ڈالر(46.41 ارب سعودی ریال) کا اضافہ ہوا، جس میں مجموعی اثاثے سال بہ سال 9.76 فی صد اضافے کے ساتھ 3,329 ارب ریال تک پہنچ گئے۔

السدیس نے مزیدکہا کہ اگرچہ جغرافیائی سیاسی خدشات سمیت چیلنجوں کی وجہ سے عالمی سپلائی چین دباؤ میں ہیں،تیل کی قیمتوں میں مستقل طورپر اضافے کی وجہ سے سعودی معیشت کواپنے ویژن 2030 کے عزائم کو فروغ دینے اوروسعت دینے میں مدد ملی ہے۔

حالیہ کے پی ایم جی سی ای او آؤٹ لک 2022 میں، دنیابھرکے کاروباری رہنماؤں نے نوٹ کیا کہ وبائی امراض کے اثرات اورمعاشی عوامل، بشمول بڑھتی ہوئی شرح سُود اور افراطِ زرکا خطرہ ، آج سب سے زیادہ دباؤ والے خدشات میں سرفہرست ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں