افغانستان وطالبان

’اقوام متحدہ طالبان کی پابندیوں کے باوجود افغانستان کی امداد بند نہیں کرے گا‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ نے جمعرات کو اعلان کیا ہے کہ وہ طالبان حکومت کی طرف سے خواتین پر پابندیاں عاید کرنے کے باوجود افغانستان کو امداد کی فراہمی جاری رکھے گا۔

افغانستان میں اقوام متحدہ کے ریزیڈنٹ کوآرڈینیٹر رمیز الکبروف نے نامہ نگاروں کو بتایا "میں آپ پر یہ واضح کر دوں کہ اقوام متحدہ اپنے انسانی ہمدردی کے شراکت داروں کے ساتھ افغانستان کے لوگوں کو زندگی بچانے والی خدمات فراہم کرنے کے لیے پرعزم ہے۔"

الکبروف نے ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ افغانستان کی انسانی ضروریات "بہت زبردست" ہیں۔

انہوں نے کہا کہ "ہم اس بات پر یقین نہیں رکھتے کہ خواتین کی شمولیت کے بغیر جامع انسانی کام فراہم کرنا ممکن ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ "یہ ضروری ہے کہ ہم موجود رہیں اور کام انجام دیں۔"

انہوں نے زور دے کر کہا کہ "امداد کبھی مشروط نہیں ہوتی۔ آپ بھوک سے مرنے والے یا مرنے والے شخص کو خوراک یا صحت کی امداد فراہم کرنے کے لیے شرائط طے نہیں کر سکتے"۔

انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کے ایمرجنسی ریلیف کوآرڈینیٹر اور اقوام متحدہ کے دیگر اہلکار آنے والے ہفتوں میں افغانستان کا دورہ کریں گے تاکہ طالبان حکمرانوں سے صورتحال پر تبادلہ خیال کیا جا سکے، جنہوں نے حال ہی میں خواتین کو یونیورسٹیوں میں جانے سے روکا تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ "میں طالبان کے ساتھ اپنی بات چیت کے ذریعے سمجھتا ہوں کہ کسی حل تک پہنچنے کا بہترین طریقہ دباؤ نہیں بلکہ بات چیت ہے۔ ماضی میں اس تحریک نے دباؤ کا اچھا جواب نہیں دیا۔"

یو این اہلکار نے افغان وزیر صحت کے ساتھ بات چیت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کے حکام پہلے ہی طالبان حکام کے ساتھ صورتحال پر کئی بار"تعمیری" بات چیت کر چکے ہیں۔

انہوں نے وضاحت کی کہ "خواتین اور لڑکیوں کو صحت کی خدمات کی فراہمی طبی عملے کے بغیر ممکن نہیں ہو گی۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں