روس اور یوکرین

یوکرین کے ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل سمیت کئی اعلیٰ عہدے دارمستعفی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

یوکرین کے کئی اعلیٰ عہدے داروں نے منگل کے روز اپنے عہدوں سے استعفا دے دیا ہے۔اس کے بارے میں کیف کا کہنا ہے کہ اس سے ظاہرہوتا ہے کہ صدر ولادیمیرزیلنسکی بدعنوانی کے الزامات سے نمٹنے میں معاشرے سے مطابقت رکھتے ہیں۔

روس کے یوکرین پرحملے کا ایک سال مکمل ہونے پرآنے والے دنوں میں مزید اہل کاروں کی تبدیلیاں متوقع ہیں۔ یوکرین کے ایک ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل، صدر کے دفتر کے ایک نائب سربراہ اور ایک نائب وزیر دفاع سمیت حکام کے مستعفی ہونے کا اعلان زیلنسکی کی جانب سے پیرکے روزکیے جانے والےاعلان کے بعدکیا گیا ہے۔

زیلینسکی کے ایک سینیرمشیر میخیلو پوڈولیاک نے کہاکہ صدرعوام کے ایک اہم مطالبے کا براہ راست جواب دیتے ہیں۔صدر کے دفتر نے کہا ہے کہ اپنے نائب سربراہ کی حیثیت سے کیریلوتیموشینکو کا استعفیٰ قبول کرلیا گیا ہے۔ تیموشنکو نے عہدہ چھوڑنے کی کوئی وجہ نہیں بتائی۔

وہ صدرزیلنسکی کی انتخابی مہم میں کام کرتے تھے اور 2019 سے یوکرین کے علاقوں اورعلاقائی پالیسیوں کی نگرانی کر رہے تھے۔ حملے کے دوران میں اسپورٹس کاریں چلانے پر یوکرینی میڈیا کی جانب سے انھیں تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا۔تاہم انھوں نے کسی غلط کام کی تردید کی تھی اور کہا تھا کہ یہ گاڑیاں کرائے پرلی گئی تھیں۔

پراسیکیوٹرجنرل کے دفتر نے بتایا کہ ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل اولیکسی سیمونینکوکوان کی اپنی مرضی کے مطابق عہدے سے ہٹایا گیا ہے۔

میڈیا ذرائع ابلاغ کے مطابق روس کے ساتھ جنگ کے باوجود نئے سال کے موقع پر سپین کے شہر ماربیلا میں اپنے اہل خانہ کے ساتھ 10 دن کی چھٹیاں گزارنے پر سیمننکو کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا۔تاہم انھوں نے ان الزامات پرعوامی طور پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔

زیلنسکی نے پیرکی رات تقریر میں کہا کہ حکام اب سرکاری کاموں سے غیرمتعلقہ مقاصد کے لیے بیرون ملک سفرنہیں کر سکیں گے۔یوکرین کے نائب وزیر دفاع ویاچیسلاف شاپوفالوف نے اپنے عہدے سے اس وقت استعفا دے دیا ہے جب یوکرین کی میڈیارپورٹ میں وزارتِ دفاع پر خوراک مہیا کرنے کے لیے قیمتوں میں اضافے کا الزام عایدکیا گیا تھا۔

وزارت کا کہنا ہے کہ یہ الزامات بے بنیاد ہیں لیکن شاپوفالوف کا استعفا ایک 'قابل قدر کام' ہے جس سے وزارت پراعتماد برقرار رکھنے میں مدد ملے گی۔

جنگ کے آغاز کے بعد ایک اور جھٹکے میں ایس بی یو سکیورٹی سروس کے سربراہ اور ریاستی پراسیکیوٹر جنرل کو گذشتہ جولائی میں ان کے عہدوں سے ہٹا دیا گیا تھا۔انھیں زیلنسکی کا قریبی اتحادی سمجھا جاتاتھا، لیکن ان کا کہنا تھا کہ وہ اپنی تنظیموں میں غداروں کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے میں ناکام رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں