امریکی صدر پر فیس بک استعمال کرنے پر پابندی نہیں ہونی چاہیے: ٹرمپ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

میٹا کمپنی نے اعلان کیا ہے کہ وہ جلد ہی سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے فیس بک اور انسٹاگرام اکاؤنٹس کو دوبارہ فعال کرنے کی اجازت دینے کا ارادہ رکھتی ہے۔ سابق صدر پر ان ٹولز کے استعمال پر پابندی سنہ 2021 میں کیپیٹل ہل کی عمارت پر ان کے حامیوں کے دھاوے کے بعد لگائی گئی تھی۔

دوسری جانب سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ امریکی صدر پر فیس بک استعمال کرنے پرپابندی نہیں ہونی چاہیے۔

’میٹا‘ کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ "ہم آنے والے ہفتوں میں مسٹر ٹرمپ کے فیس بک اور انسٹاگرام اکاؤنٹس کو دوبارہ فعال کریں گے"۔ میٹا کے بین الاقوامی امور کے سربراہ نیک کلیگ کی طرف سے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ پابندی اٹھائے جانے کے بعد نئے حفاظتی اقدامات کیے جائیں گے تاکہ دوبارہ خلاف ورزیوں کو روکا جا سکے۔

مسٹر کلیگ نے کہا کہ پلیٹ فارم کی پالیسیوں کی ہر خلاف ورزی پر ریپبلکن لیڈر کا اکاؤنٹ دو سال تک کے لیے معطل کیا جا سکتا ہے۔

ڈونلڈ ٹرمپ کے ٹوئٹر اکاؤنٹ کا عکس
ڈونلڈ ٹرمپ کے ٹوئٹر اکاؤنٹ کا عکس

یہ واضح نہیں کہ جب ٹرمپ صدراتی انتخابات کے لیے اپنی تیسری دوڑ کا اعلان کریں گے تو وہ پلیٹ فارم پر واپس آنا چاہیں گے۔ تاہم ان کے نمائندوں نے فوری طور پر تبصرہ کی درخواست کا جواب نہیں دیا۔

میٹا کی جانب سے فیس بک اور انسٹا گرام پر دو سال کی مدت کے لیے ان پر عائد پابندی ہٹانے کے اعلان پر اپنے رد عمل میں سابق امریکی صدر نے اعلان کیا کہ کسی بھی صدر پر دوبارہ سوشل میڈیا پر پوسٹ کرنے پر پابندی نہیں لگائی جائے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں