امریکاکی اسرائیل کے ساتھ سب سے بڑی مشترکہ مشقیں؛نئی فوجی حکمتِ عملی کامظہر؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
7 منٹس read

گذشتہ ہفتے امریکا اوراسرائیل کے درمیان مشترکہ فوجی مشقوں نے ایران کوایک مضبوط اشارہ دیا تھا کہ دونوں ممالک تہران یا اس کے آلہ کاروں کی طرف سے کسی بھی ضرررساں یاتخریبی سرگرمی کا مقابلہ کرنے کے لیے تیارہیں۔ لیکن حکام کے مطابق جونیپر اوک 23.2 مشقیں اسرائیل کی سلامتی کے لیے واشنگٹن کے 'آہنی' عزم کو ظاہر کرنے سے کہیں زیادہ تھیں۔

امریکا اب تنازعات اورجنگ زدہ علاقوں میں مداخلت کے طریق کارکو تبدیل کرنے کی کوشش کر رہا ہے، جس کا مظاہرہ گذشتہ ہفتے پینٹاگون کی جانب سے تاریخ میں اپنی نوعیت کی سب سے بڑی مشق کے دوران میں کیا گیا تھا۔

امریکا کےایک سینیردفاعی عہدہ دار نے بتایا کہ قریباً 6400 امریکی فوجیوں اور 140 سے زیادہ طیاروں نے اس فوجی مشق میں حصہ لیا تھا۔ان میں بی 52، ایف 35، ایف 15، ایف 16، ہائی موبلٹی راکٹ آرٹلری سسٹم (ہیمارس)، کثیرمقاصد لانچ راکٹ سسٹم (ایم ایل آر ایس) اور طویل فاصلے تک مار کرنے والے بمبارطیارے شامل تھے۔

عہدہ دارنے العربیہ کو بتایا کہ’’تیزی سے، ہم ایک ایسی پوزیشن میں منتقل ہونا چاہتے ہیں جہاں ہماری قابل ذکرموجودگی اب بھی خطے میں برقرارہے، لیکن جب ہمارے پاس خطرے کے اشارے اورانتباہ ہوں گے تو ہم خطے میں متحرک طورپرفورسز کو بڑھانے کے قابل ہیں‘‘۔

بہ الفاظ دیگر، امریکا کسی ملک یا میدان جنگ میں ہزاروں فوجیوں کی تعیناتی سے پیچھے ہٹنا چاہتا ہے، جیسا کہ عراق اور افغانستان میں ہوا تھا، اورمتحرک فورس کے اطلاق (ایمپلائمنٹ) یا ڈی ایف ای کی حکمتِ عملی پرعمل پیراہورہا ہے۔

ڈی ایف ای کو 2018 کی قومی دفاعی حکمت عملی (این ڈی ایس) میں بیان کیا گیا تھا کہ یہ محکمہ دفاع کو "اسٹریٹجک ماحول کو فعال طورپرتشکیل دینے کے لیے تیارافواج کو زیادہ لچکدارطریقے سے استعمال کرنے کی اجازت دیتی ہے جبکہ ہنگامی حالات کا جواب دینے اور طویل مدتی جنگ کی تیاری کو یقینی بنانے کے لیے تیاررہتا ہے۔

گذشتہ سال کے این ڈی ایس نے ڈی ایف ای کا ذکر نہیں کیا تھا لیکن کہا تھا کہ پینٹاگون ’’طاقت کے اطلاق کے تصورات اور صلاحیتوں کو تلاش کرے گا جو بحران کے استحکام اورکشیدگی میں اضافے کے خطرے کا جائزہ لیتے ہوئے دشمن کی طاقت کے تخمینے کو کم کرتے ہیں‘‘۔

ڈی ایف ای کی حکمت عملی امریکا کو محدود مدت کے لیے کسی مشن پرتیزی سے فوج بھیجنے اور مکمل ہونے کے بعد واپس آنے کی اجازت دے گی لیکن ایسا کرنے کے لیے امریکا کو ایسے شراکت داروں پر انحصار کرنے کی ضرورت ہے جو بھرپورباہمی تعاون کے قابل ہوں اور’’پہلے ہی امریکا کے نیٹ ورکس‘‘ میں ضم ہو چکے ہوں۔

گذتہ ہفتے کی مشقوں سے ظاہر ہوتا ہے کہ امریکا اور اسرائیل پہلے ہی اس حکمت عملی پرعمل پیرا ہوسکتے ہیں۔ عہدہ دار نے بتایا کہ جونیپر اوک کو "چند مہینوں" میں وضع کیا گیا اورعملی جامہ پہنایا گیا تھا جبکہ عام طور پر اس نوعیت کی مشقوں کے لیے ایک سے دو سال کی منصوبہ بندی کی ضرورت ہوتی ہے۔

تاہم امریکا کی مرکزی کمان (سینٹ کام) کے سابق کمانڈرجنرل فرینک میک کینزی نے العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ڈی ایف ای کچھ خطرات کے ساتھ آتا ہے۔اس قسم کی چیزوں کے ساتھ منسلک وسیع ممکنہ کشمکش ہے۔آپ ہمیشہ فورسز کے جلد از جلد وہاں پہنچنے پر بھروسا نہیں کرسکتے ہیں،خاص طورپراگرفورسز کی تعیناتی کا مقابلہ کیا جاتا ہے توایسا کرنا بہت مشکل ہوگا۔

تاہم، جنرل میک کینزی کے بہ قول ’’یہ ایک اچھا تصور ہے۔میرے خیال میں اس سے سکریٹری کو زیادہ لچکدار انداز میں جواب دینے کے لیے زیادہ تیرمل جاتے ہیں‘‘۔

میکنزی نے کہا کہ وزیر دفاع واحد شخص ہیں جو ڈی ایف ای کے حصے کے طور پران کی ہدایت کوافواج کو منتقل کرنے کا اختیار رکھتے ہیں۔

امریکاکی مستحکم فوجی پوزیشن

گذشتہ ہفتے براہ راست فائرنگ کی مشقوں کو دیکھنے والا ایران اکیلا دشمن نہیں تھا، حالانکہ پینٹاگون کے پریس سیکریٹری بریگیڈیئر جنرل پیٹ رائیڈر نے کہاتھا کہ ان مشقوں کا ہدف"کوئی ایک دشمن یا خطرہ نہیں تھا۔

نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر العربیہ سے بات کرنے والے ایک سینیرامریکی دفاعی عہدہ دار کے مطابق روس اور چین کو بھی بالواسطہ پیغام بھیجا جا رہا ہے۔

ایک ایسے وقت میں جب امریکا روس کے حملے کے خلاف یوکرین کی حمایت کرنے اوراس کے مقبوضہ علاقوں کو دوبارہ حاصل کرنے پر توجہ مرکوز کیے ہوئے ہے ،چین کے تائیوان پر حملے کا ایک مضبوط امکان ہے۔

عہدہ دار نے کہا کہ گذشتہ ہفتے منعقدہ مشقوں کی کثیر الجہت نوعیت سے ظاہرہوتا ہے کہ امریکی فوج یورپ اور بحرہند و بحرالکاہل میں اپنے وعدوں کی پاسداری کرتے ہوئے فوری طورپرایک مشن انجام دینے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

اس عہدہ دار نے مزید کہا کہ واشنگٹن کے عرب اور خلیجی اتحادیوں کو اس مشق کو اپنی حفاظت اور سلامتی کے لیے امریکا کے عزم کی ایک اورعلامت کے طور پردیکھنا چاہیے۔انھوں نے کہا کہ ہمیں اس بات کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے کہ لوگ یہ سمجھیں کہ ہم افواج کو اندرمنتقل کرنے جارہے ہیں اورافواج کو باہرنکالنے جا رہے ہیں لیکن ہم اسے ایک رفتاراورپیمانے پرکر سکتے ہیں تاکہ لوگ فیصلہ نہ کریں۔

یہ پیغام اتحادیوں اور شراکت داروں کے ساتھ ساتھ مخالفین کے لیے بھی ہے، نہ کہ امریکی فوجی پوزیشن کا تعین کرنے کے لیے خطے میں موجود فوجیوں کی تعداد کو دیکھنے کے لیے۔

اس عہدہ دار کا کہنا تھا:’’ہم یہ تجویز دینے کی کوشش کر رہے ہیں کہ اب ہمارے پاس جو کچھ ہے وہ صرف برفانی تودے کی نوک ہے کہ اگر ضرورت پڑی تو ہم کیا برداشت کر سکتے ہیں‘‘۔

جونیپراوک کے آغاز میں جب بریگیڈیئر جنرل رائیڈر سے پوچھا گیا کہ کیا خطے میں امریکی اتحادیوں کو کوئی پیغام دیا گیا ہے توانھوں نے کہا کہ یہ مشق اس حقیقت کو ظاہرکرتی ہے کہ امریکا ایک قابل اعتماد شراکت دار ہے اور ہم خطے کی سلامتی اور استحکام کو یقینی بنانے کے لیے مل جل کرکام کرتے رہیں گے۔

جنرل میکنزی نے جونیپراوک مشق کی تعریف کی اور اپنے جانشین جنرل ایرک کوریلا اورسینٹ کام کو ان کے "واقعی قابل ذکر کام" پرسراہا۔

انھوں نے کہا،’’سب سے اہم بات یہ ہے کہ خطے میں اپنے شراکت داروں کو یقین دلائیں، ان لوگوں کو یقین دلائیں جن کے ساتھ آپ یہ مشق کررہے ہیں، اور اپنے دیگر شراکت داروں کو یقین دلائیں کہ آپ ایک قابل اعتماد اتحادی رہیں گے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں