امریکا نے فضا میں اڑنے والا پراسرار ڈھانچہ مار گرایا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا نے صدر جو بائیڈن کے حکم پر الاسکا کے اوپر ایک "اونچی پرواز کرنے والی چیز" کو مار گرایا۔ وائٹ ہاؤس کے ترجمان نے جمعہ کی شام اس کی نوعیت یا ذریعہ کے بارے میں مزید تفصیلات بتائے بغیر کہا کہ ایک مشکوک ڈھانچے کو فائر کر کے گرا دیا گیا ہے۔

وائٹ ہاؤس میں قومی سلامتی کونسل کے ترجمان جان کربی نے کہا کہ یہ "آبجیکٹ" جس کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ "ایک چھوٹی کار کے سائز کا تھا" "فضائی نیویگیشن کی سلامتی کے لیے ممکنہ خطرہ لگ رہا تھا"۔

نیویارک ٹائمز کے مطابق امریکی حکام نے کہا کہ اس بات کی تصدیق نہیں ہوسکی ہے کہ آیا یہ شے غبارہ ہے یا نہیں، لیکن یہ ایسی بلندی پر اُڑ رہا تھا جس کی وجہ سے یہ شہری طیاروں کے لیے ممکنہ خطرہ تھا۔

اپنی طرف سے کربی نے وضاحت کی کہ بائیڈن نے "انتہائی احتیاط سے" نامعلوم شے کو گولی مارنے کا حکم دیا اور مزید کہا کہ یہ چیز 40,000 فٹ کی بلندی پر حرکت کر رہی تھی۔

انہوں نے کہا کہ اس چیز کو ایک لڑاکا طیارے کے ذریعے الاسکا کے ساحل پر پانی کے اوپر گرایا گیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ملبہ اٹھانے کی کوششیں جاری ہیں۔

ایک امریکی اہلکار نے مقامی میڈیا کو بتایا کہ ہدف سے زمین پر موجود لوگوں کو "فوجی خطرے کے کوئی تصدیق شدہ اشارے نہیں ملے ہیں"۔ حکام نے کہا کہ وہ اس بات کی تصدیق نہیں کر سکے کہ آیا گرائی گئی چیز پر کوئی جاسوسی کا سامان موجود تھا۔

یہ کارروائی امریکی لڑاکا طیارے نے ایک چینی جاسوس غبارے کو مار گرانے کے ایک ہفتے سے بھی کم وقت کے بعد کی ہے جو امریکہ کے اوپر سے پرواز کر رہا تھا۔

حکام کے مطابق امریکی فضائی حدود کا دخول نسبتاً مختصر تھا، یہی ایک وجہ ہے کہ وہ فوری طور پر اس چیز کی شناخت نہیں کر سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں