روس میں حملے کرنے والا ایک ڈرون ماسکو کے قریبی شہرمیں گرکرتباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

کل منگل کے روز روس کی حدود میں ہونےوالے ڈرون حملوں کے بعد خاموشی کی فضا پائی جا رہی ہے۔ دوسری جانب ماسکو کے قریبی شہر کولومنا میں ایک ڈرون طیارے کے گرکر تباہ ہونے کی اطلاعات ہیں تاہم اس واقعے میں کسی قسم کے جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی۔

ابھی تک کسی گروپ کی شناخت کے شواہد کی تصدیق نہیں کی ہے جس نے گذشتہ منگل کو روسی حدود میں ڈرون حملے کیے تھے۔ یہ حملے روسی دارالحکومت ماسکو کے مرکز سے 110 کلومیٹر دور کولومنا شہر کے قدرتی گیس پمپنگ اسٹیشن کےقریب ہوئے اور وہاں پر ایک ایک ڈرون گرکر تباہ ہوگیا۔ ماسکو کے علاقے کے گورنر آندرے ووروبیوف نے مقامی میڈیا کو بتایا کہ اس واقعے میں کوئی نقصان نہیں ہوا۔

جہاں تک گیس پمپنگ اسٹیشن کا تعلق ہے تو یہ Gazprom کمپنی کی ملکیت ہے، جسے ریاست کے زیر کنٹرول "انرجی دیو" کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔

اس واقعے کی تفصیلات ایک روسی انگریزی ویب سائٹ پرشائع کی گئی ہیں جو العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطالعے سے بھی گذری ہیں۔

ویب چینل SHOT TV نے مزید کہا کہ طیارہ "جلدی سے اونچائی پر توازن کھو بیٹھا، شاید ایندھن ختم ہونے کی وجہ سے وہ مزید پرواز نہیں کرسکا اور گر کرتباہ ہوگیا۔" شاید پرواز کے دوران درختوں نے کے بازو کو نقصان پہنچایا، جس کی وجہ سے یہ گر گیا اور گر کر تباہ ہوگیا۔ اگر یہ گرتباہ نہ ہوتا تو شائد ماسکو تک چلا جاتا۔

یہ طیارہ UJ-22 ایئر بورن ہے جسے یوکرین کی کمپنی UKRJET نے تیار کیا ہے۔ اس کی رینج 800 کلومیٹر ہے۔ روسی مقامی میڈیا نے روسی فیڈرل سکیورٹی سروس یا "FSB" کے ایک اہلکار کے حوالے سے مختصر الفاظ میں مزید کہا کہ اس میں شدید درجے کی دھماکہ خیز صلاحیت کا حامل C-4 پلاسٹک دھماکہ خیز مواد موجود تھا۔

فوری طور پریوکرین کے صدارتی مشیرمیخائیلو پوڈولیاک نےان ڈرون طیاروں کو بھیجنے کی تردید کی ہے۔ انہوں نے ٹویٹر پر ایک ٹویٹ لکھا کہ "یوکرینی افواج" روس کے اندر اہداف پر حملے نہیں کرتی ہیں۔

روسی صدر پوتین کے ترجمان دمتری پیسکوف نے بدھ کو ایک تقریر میں کہا کہ وہ یوکرینی صدر کے مشیر کی باتوں پر یقین نہیں کرتے۔ انہوں نے یوکرینی وزیر داخلہ کے مشیر انتونیو گیراشینکو کے ایک ٹویٹ کا حوالہ دیا۔

Anton Gerashchenko نے گزشتہ منگل کو اپنی ٹویٹ میں کہا تھا کہ "ولادی میرپوتین عوام میں آنے سے خوف زدہ ہیں کیونکہ ڈرون ان کے قریب فاصلے تک پہنچ سکتے ہیں"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں