امریکی بندرگاہوں میں دیوہیکل چینی کرینیں جاسوسی کے ٹولز ہیں: پینٹاگون

امریکی خدشات تجارتی اور اقتصادی تعاون روکنے کی ایک "بے وقوفانہ" کوشش ہے: چینی سفارت خانہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

امریکی حکام نے تشویش کا اظہار کیا ہے کہ ملک بھر کی امریکی بندرگاہوں پر کام کرنے والی چینی ساختہ دیو ہیکل کرینیں بیجنگ کے لیے ایک ممکنہ جاسوسی ٹول بن سکتی ہیں۔ یہ کرینیں ایسے ٹول بن سکتی ہیں جو نظروں سے پوشیدہ ر ہیں گی۔ یاد رہے امریکی بندرگاہوں پر چینی فوج کے زیر استعمال کرینیں بھی موجود ہیں۔ کچھ قومی سلامتی کے حکام اور پینٹاگون نے کہا ہے کہ چین میں قائم ’’ زید پی ایم سی‘‘ کی بنائی ہوئی کرینیں جو جہاز سے بندرگاہوں تک سامان لے جاتی ہیں وہ بہتر انداز میں بنی ہوئی ہیں اور نسبتاً سستی ہیں لیکن ان میں جدید ترین سینسرز ہیں جو کنٹینرز کے منبع اور منزل کو ریکارڈ اور ٹریک کر سکتے ہیں۔

اس صورتحال سے خدشات بڑھ رہے ہیں۔ امریکی وال سٹریٹ جرنل کے مطابق دنیا بھر میں امریکی فوجی کارروائیوں میں مدد کے لیے ملک کے اندر یا باہر بھیجے جانے والے سامان کے بارے میں معلومات کو چرایا جا سکتا ہے۔ کچھ لوگوں نے بتایا ہے کہ 2021 میں ایف بی آئی کے ایجنٹوں نے زیڈ پی ایم سی کی کرینوں کو بالٹی مور کی بندرگاہ پر لے جانے والے کارگو جہاز کی تلاشی لی اور ان میں سے کچھ لوگوں نے بتایا کہ انٹیلی جنس اکٹھا کرنے والا سامان جہاز میں ملا۔

واشنگٹن میں چینی سفارت خانے کے ایک نمائندے نے کرینوں کے بارے میں امریکی خدشات کو چین کے ساتھ تجارتی اور اقتصادی تعاون کو روکنے کی ایک "بے وقوفانہ" کوشش قرار دیا۔

حالیہ برسوں میں امریکی قومی سلامتی کے حکام نے چین میں تیار کردہ آلات کی ایک رینج کی طرف اشارہ کیا ہے جو امریکہ میں نگرانی یا رکاوٹوں کو آسان بنا سکتے ہیں۔ ان آلات میں سامان کی جانچ کے نظام اور برقی ٹرانسفارمرز کو بھی شامل کیا گیا ہے۔ چین کے ارد گرد کی بندرگاہوں پر بڑھتے ہوئے کنٹرول کے بارے میں وسیع تر خدشات کا اظہار بھی کیا گیا ہے۔ سٹریٹجک سرمایہ کاری کے ذریعے چین دنیا کے تقریباً تمام نئے شپنگ کنٹینرز تیار کرتا ہے اور شپنگ ڈیٹا سروس کو کنٹرول کرتا ہے۔

اسی تناظر میں، بڑے جہاز سے بندرگاہ جانے والی کرینوں نے نئی دلچسپی کو اپنی طرف متوجہ کیا ہے۔ دسمبر میں منظور ہونے والے 850 بلین ڈالر کے دفاعی پالیسی بل کے تحت محکمہ ٹرانسپورٹیشن کے بحری عہدیداروں سے لیکر سیکرٹری دفاع اور دیگر کے ساتھ مشاورت کی گئی اور کہا گیا کہ اس سال کے آخر تک ایک غیر مرتب شدہ مطالعہ تیار کرنے کی ضرورت ہے کہ آیا غیر ملکی ساختہ کرینیں سائبر خطرے کا باعث بنتی ہیں یا یہ کرینیں امریکی بندرگاہوں میں سیکورٹی کے لیے خطرہ بن رہی ہیں یا نہیں۔

بڑے سائز کی کرینیں عام طور پر امریکی بندرگاہوں تک پہنچائی جاتی ہیں جو مکمل طور پر بحری جہازوں پر جمع ہوتی ہیں اور چینی ساختہ سافٹ ویئر کے ذریعے چلائی جاتی ہیں۔ امریکی حکام نے کہا کہ کچھ معاملات میں دو سالہ امریکی ویزے کے ساتھ کام کرنے والے چینی شہریوں کی مدد کی جاتی ہے۔ ان عوامل کو انہوں نے ممکنہ راستہ قرار دیا جن کے ذریعے انٹیلی جنس معلومات اکٹھی کی جا سکتی ہیں۔

ڈیفنس انٹیلی جنس ایجنسی نے 2021 میں ایک درجہ بندی کی تشخیص کی جس میں پتہ چلا کہ بیجنگ بندرگاہ پر ٹریفک کو روک سکتا ہے یا فوجی سازوسامان بھیجے جانے کے بارے میں انٹیلی جنس اکٹھا کرسکتا ہے۔ امریکی رکن کانگریس کارلوس جمنیز نے گزشتہ برس قانون سازی متعارف کرائی تھی تاکہ چینی کرینوں کی مستقبل میں امریکی خریداری پر پابندی لگائی جائے اور دیگر مینوفیکچررز کی حوصلہ افزائی کی جائے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں