’بیٹی کی شادی پراس کےباپ کی طرف سے اپنے داماد کو کیا حیران کن پیغام دیا‘

"میری بیٹی کے حق میں اللہ سےڈرنا" شادی کے سامان کی فہرست میں سامان کے بجائے دلہن کے والد کا حیران کن جملہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

مصرمیں شادی سے قبل دلہن کی طرف سے گھر بسانے کے لیے دلہا کو شادی کے سامان[جہیز] کی ایک فہرست پہنچاتی ہے۔ اگرچہ یہ رسم مصری سماج کا حصہ ہے مگراس میں عام طور پر گھریلو ضروریات کا سامان ہی ہوتا ہے۔

مقامی سطح پر اس فہرست کو’امانت‘ بھی کہا جاتا ہے۔ اسی فہرست سے جڑی ایک حیران کن خبر ان دنوں مصری سوشل میڈیا کی توجہ کامرکز بنی ہوئی ہے۔

حیران کردینے والی خبر یہ ہے کہ اسکندریہ گورنری سے تعلق رکھنے والےایک شخص نے اپنی بیٹی کی شادی سے قبل ہونے والے دلہا کو سامان کی جو فہرست دی ہے اس میں اس نے لکھا کہ ’میری بیٹی کے حق میں اللہ سے ڈرنا‘۔ مصریوں کے لیے کسی بیٹی کے باپ کی طرف سے اس کی رخصتی سے قبل دلہا کو اس طرح کا پیغام دینا معمول کی بات ہے۔

مصری شہری انجی عصام نے اپنی بیٹی کے ہونے والے شوہر کریم المنیاوی کو سامان کی فہرست اس وقت دی جب المنیاوی اپنے دیگر اقارب کے ہمراہ اپنے سسر کے گھر آئے۔

انجی عصام نے لکھا کہ "جسے ناموس کی امانت سونپی گئی ہو وہ پیسے نہیں مانگتا۔ ہماری عزت میں خدا سے ڈرنا۔" اس جملے کے ساتھ دلہن کے والد اینجی عصام نے اپنی بیٹی کے دولہا کریم المنیاوی سے وہ سب کچھ بیان کیا جو وہ چاہتے تھے۔ اس فہرست پر دلہا نے دستخط کیے۔ وہ حیران رہ گئے کہ اس فہرست میں سامان کی تو کوئی تفصیل نہیں تھی البتہ صرف اتنا لکھا تھا کہ ان کی بیٹی کے حق میں اللہ سے ڈرنا۔

دولہے نے اس پر حیرت کا اظہار کیا جو اس نے شادی کے سامان کی فہرست میں دیکھا اور العربیہ ڈاٹ نیٹ کو ایک بیان میں وضاحت کی کہ دلہن کا خاندان اپنے حسن سلوک کے لیے جانا جاتا ہے۔

المنیاوی نےکہا کہ وہ شادی کے معاہدے سے چند روز قبل دلہن کے گھر والوں کے پاس جا کر منقولہ اشیاء کی فہرست اور جہیز کی تاریخ پر دستخط کرنا چاہ رہے تھے لیکن "فہرست" میں جو کچھ لکھا ہے اسے دیکھ کر وہ حیران رہ گئے۔

دلہن کے والد کے عہدے کے بارے میں المنیاوی نے واضح کیا کہ وہ ان کا مشورہ ان پر قرض ہے۔ وہ خدا کو خوش کرنے کے بعد اپنی بیوی کا خیال رکھیں گے۔

سوشل میڈیا پر رد عمل

مذکورہ فہرست ان دنوں مصری سوشل میڈیا پر چھائی ہوئی ہے اور اس پر ملا جلا رد عمل آرہا ہے۔

بعض اسے دلہن کے حق میں کمی قرار دیتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ باپ کو ایسا کرنے کا حق نہیں تھا جب کہ بعض نے اسے ایک طرح کی سہولت اور نیک خیال قرار دیا۔

سوشل میڈیا پر منفی تبصروں کے بارے میں المنیاوی نے تصدیق کی کہ وہ ان تبصروں سے بالکل متاثر نہیں ہوئے۔ انہوں نے کہا کہ میں اور میری اہلیہ اپنے بنائے منصوبے اور پروگرام کے مطابق آگے بڑھ رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں