سعودی عرب عالمی نمائش 2030 کی میزبانی کے لیے مضبوط امیدوارہے:سیکریٹری جنرل بی آئی ای

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

بین الاقوامی نمائش بیورو(بی آئی ای) کے سیکریٹری جنرل دمتری کرکنٹزیزنے کہا ہے کہ سعودی عرب نے عالمی نمائش 2030 کی میزبانی کے لیے ایک 'مضبوط' کیس پیش کیا ہے۔

بی آئی ای کا جائزہ مشن گذشتہ ہفتے الریاض کے دورے پر پہنچا تھا۔اس کا مقصد ایکسپو کی میزبانی کی ملک کی تجویز کا جائزہ لینا تھا۔الریاض میں قیام کے دوران میں وفد نے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے علاوہ متعدد وزراء اور عہدے داروں سے ملاقاتیں کی ہیں۔انھوں نے مملکت کی امیدواری کے بارے میں مزید وضاحت کی۔

وفد نے الریاض ایکسپو 2030 کی مجوزہ جگہ کا بھی دورہ کیا اور اسے ہائی ٹیک پبلک ٹرانسپورٹ سسٹم سے متعارف کرایا گیا جو شہر کے بنیادی ڈھانچے کے منصوبے کا محور ہے۔

سیکریٹری جنرل نے دورے کے اختتام پر ایک نیوزکانفرنس میں کہا کہ ’’ہم نے سعودی عرب کے جن احباب اور عہدے داروں سے بھی بات چیت کی ہے، ہم نے ان سب کو اس منصوبے کے لیے ناقابل یقین حدتک پُرعزم پایا ہے۔اس میں کوئی شک نہیں کہ سعودی عرب اور الریاض کے پاس ایکسپو کی میزبانی کے لیے ہر ضروری چیز موجود ہے‘‘۔

دمتری کرکنٹزیزنے کہا کہ’’الریاض میں جو پیش رفت دیکھنے کو مل رہی ہے،وہ سعودی عرب کو ایکسپو کے لیے مسابقتی امیدوار بنانے میں اہم کردارادا کرتی ہے۔اس ضمن میں شہر کے بنیادی ڈھانچے کی توسیع ایک لازمی عنصر ہےجواس طرح کی ایکسپو کی ضروریات کو مکمل طور پر پورا کرتا ہے‘‘۔

سعودی عرب نے ستمبر 2022 میں الریاض میں ورلڈ ایکسپو 2030 کی میزبانی کے لیے باضابطہ طور پر اپنی جامع درخواست جمع کرائی تھی۔ وہ یکم اکتوبر 2030 سے 31 مارچ 2031 تک الریاض میں عالمی نمائش کی میزبانی کرنے کا ارادہ رکھتا ہے جس کا موضوع ’’تبدیلی کا دور:ایک دوراندیش کل کے لیے ایک ساتھ‘‘ہے۔

بی آئی ای کی ویب سائٹ کے مطابق سعودی عرب سے شروع ہونے والا یہ مشن ایکسپو کے انعقاد کے لیے مقابلے میں تین دیگرامیدوارممالک کا دورہ کرے گا۔ان میں یوکرین، جمہوریہ کوریا اور اٹلی شامل ہیں۔میزبان ملک کے حتمی انتخاب سے قبل ان چار امیدوار ممالک میں سے ہر ایک کے جائزے کا مرحلہ لازمی ہے۔

ورلڈایکسپو2030 کے میزبان ملک کا انتخاب بی آئی ای کے رکن ممالک نومبر2023 میں بی آئی ای میں جنرل اسمبلی کے دوران میں ایک ملک،ایک ووٹ کے اصول پر خفیہ رائے شماری کے ذریعے کریں گے۔

پریس کانفرنس میں انکوائری مشن کے چیئرپرسن اور بی آئی ای ایڈمنسٹریشن اینڈ بجٹ کمیٹی کے صدر پیٹرک اسپیخت نے وفد کی دورے میں شاندار مہمان نوازی پر سعودی عرب کا شکریہ ادا کیا۔

ایس پی اے کی رپورٹ کے مطابق اسپیخت نے کہا:’’ہمیں شاہی عزت مآب سے ملنے کا بہت بڑا اعزازحاصل ہوا،جو ہمارے مشن کی اہم خصوصیات میں سے ایک تھا۔ہمیں دکھایا گیا کہ ملک کیا کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے، اورملک اور شہر کے پاس وہ سب کچھ ہے جس کے بارے میں ہم جاننا چاہتے تھے‘‘۔

شاہی کمیشن برائے الریاض سٹی کے چیف ایگزیکٹوآفیسر(سی ای او) فہدالرشید نے مشن کی کاوشوں پران کا شکریہ ادا کیا اور ورلڈ ایکسپو کی میزبانی کے لیے سعودی عرب کی آمادگی پر زور دیا۔

انھوں نے کہا کہ ’’ہم ایک مضبوط امیدوارہیں کیونکہ ہم نے تمام تکنیکی ضروریات کو پوراکیا ہےاور ہمیں الریاض ایکسپو 2030 کی میزبانی کے لیے غیر معمولی بین الاقوامی حمایت حاصل کی ہے‘‘۔

ان کاکہنا تھاکہ’’ہم الریاض ایکسپو 2030 کا ایک غیرمعمولی ایڈیشن پیش کریں گے ، جہاں ہم غیر معمولی حاضری حاصل کرنے کی توقع کرتے ہیں اور توقع ہےکہ چارکروڑ زائرین نمائش دیکھنے کے لیے آئیں گے اور میٹاورس کے ذریعے ایک ارب زائرین اسے دیکھ سکیں گے۔عالمی نمائشوں کی تاریخ میں ایسا پہلی بارہوگا‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں