برطانیہ، اسرائیل کا سلامتی، ٹیکنالوجی، تجارتی تعلقات کے فروغ کے لیے معاہدہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

برطانیہ اور اسرائیل ایک معاہدے پر دستخط کریں گے جس کا مقصد اگلے سات سالوں میں ٹیکنالوجی، تجارت اور سلامتی کے لیے تعلقات کو مضبوط کرنا ہے۔

اس کے لیے برطانوی وزیر خارجہ جیمز کلیورلی منگل کو لندن میں اپنے اسرائیلی ہم منصب سے ملاقات کریں گے۔

اسرائیل کے ایلی کوہن برطانیہ کے ساتھ تعلقات کے نئے روڈ میپ پر دستخط کرنے کے لیے آج لندن کا دورہ کر رہے ہیں۔

"یہ روڈ میپ ہمیں ٹیکنالوجی، تجارت اور سلامتی سمیت باہمی دلچسپی کے شعبوں میں مواقع سے پوری طرح فائدہ اٹھانے کی اجازت دے گا،" کلیورلی نے دورے سے پہلے ایک بیان میں کہا۔

برطانیہ نے کہا کہ بات چیت میں اسرائیل اور مقبوضہ فلسطین کے علاقوں میں تشدد میں حالیہ اضافہ، یوکرین پر روس کے حملے اور ایران سے لاحق خطرات بھی شامل ہوں گے۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ معاہدے میں ٹیکنالوجی اور ایجادات کے لیے مشترکہ فنڈنگ کے منصوبوں کے تقریباً 20 ملین پاؤنڈ ($24.50 ملین) شامل ہیں۔اور اس میں سام دشمنی کی لعنت سے نمٹنے کے مشترکہ وعدے بھی شامل ہیں۔

بیان میں کہا گیا کہ برطانیہ سام دشمنی کی لعنت سے نمٹنے کے لیے اسرائیل کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے پرعزم ہے۔ 2024 میں بین الاقوامی ہولوکاسٹ ریمیمبرنس الائنس کے سربراہ کے طور پر، برطانیہ ہولوکاسٹ کے بارے میں حقائق پر مبنی علم کو فروغ دے گا اور میڈیا اور معلومات کو مضبوط کرے گا۔

برطانوی دفتر خارجہ نے اپنی پریس ریلیز میں کہا ''برطانیہ-اسرائیل تعلقات نے پہلے ہی دونوں معیشتوں کو بہت زیادہ فائدہ پہنچایا ہے۔ ہمارے تجارتی تعلقات کی مالیت تقریباً 7 بلین پاؤنڈ ہے، اور برطانیہ میں 400 سے زیادہ اسرائیلی ٹیک فرمیں کام کر رہی ہیں۔

برطانیہ میں اسرائیلی سرمایہ کاری سے ترقی اور ملازمتوں کو فروغ ملا جس سے برطانیہ کی معیشت میں تقریباً 1 بلین پاؤنڈ کا اضافہ ہوا ہے اور گزشتہ 8 سالوں میں تقریباً 16,000 ملازمتیں پیدا ہوئی ہیں۔

برطانیہ اور اسرائیل نے گذشتہ سال اس نئے تجارتی معاہدے کے لیے بات چیت کا آغاز کیا اور کہا تھا کہ یہ معاہدہ "دونوں حکومتوں کے لیے ایک اہم ترجیح ہے۔"

تاہم اس معاہدے کا وقت متنازعہ ہے کیونکہ اسے اسرائیل کی انتہائی دائیں بازو کی حکومت کے لیے منظوری کے اشارے کے طور پر دیکھا جائے گا، جس نے مقبوضہ مغربی کنارے میں آبادکاری کی توسیع کو اپنے ایجنڈے میں سرفہرست رکھا ہے، اور عدلیہ کا کردار محدود کرنے کے لیے اصلاحات کے لیے پوری دنیا میں تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں