جرمنی میں ہیلتھ ورکرز کی کمی کے باعث "گارمی" روبوٹ بزرگوں کی دیکھ بھال کرنے لگا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روبوٹ "گارمی" ریٹائرڈ ڈاکٹر گنتھر اسٹین باخ کے لیے ایک خواب ہے کیونکہ یہ جرمنی میں بیماریوں کی تشخیص اور ممکنہ طور پر مستقبل میں مناسب علاج اور نگہداشت فراہم کرنے کے قابل ہے۔

"گارمی" دوسرے روبوٹس سے مختلف نہیں ہے، کیونکہ یہ ایک موبائل بیس پر نصب ہے اور اس میں ایک روبوٹک بازو اور ایک سیاہ اسکرین ہے جس پر اس کی آنکھوں کے طور پر دو نیلے دائرے نظر آتے ہیں۔

گارمی کو میونخ انسٹی ٹیوٹ فار روبوٹکس اینڈ مشین انٹیلی جنس کے درجنوں محققین نے ڈیزائن کیا تھا جو جیریاٹرونکس میں مہارت رکھتے ہیں۔ یہ ایک نیا شعبہ ہے جس میں جراثیمی ادویات کو آگے بڑھانے کے لیے نئی ٹیکنالوجیز کا استعمال کیا جا رہا ہے۔

انسٹی ٹیوٹ جو ٹیکنیکل یونیورسٹی آف میونخ کا ایک ڈویژن بناتا ہے نے Garmisch-Partenkirchen میں اپنا Geriatronics یونٹ قائم کیا ہے جو ایک سکی ریزورٹ ہے جس میں بزرگ افراد کا تناسب سب سے زیادہ ہے۔

یہ یورپی ملک دنیا میں عمر رسیدگی کی سب سے زیادہ شرحوں میں سے ایک ہے۔

2050 تک جرمنی میں نرسنگ کی آسامیوں کی تعداد 670,000 تک پہنچنے کی توقع کے ساتھ محققین کا سادہ مقصد روبوٹس کو صحت کی سہولیات اور نرسنگ ہومز کے کام میں ضم کرنا ہے، جس سے ان نگہداشت کے مراکز کے درمیان ڈاکٹروں کی نقل و حرکت میں کمی آئے گی۔

لیبارٹری کے محقق اور سائنسی افسر عبدالجلیل ناصری کہتے ہیں کہ "ہمارے پاس پیسے نکالنے کے لیے اے ٹی ایم ہیں، لیکن تصور کریں کہ ایک دن اور اسی ماڈل کے اندر لوگ ایک قسم کے ٹیکنالوجی سینٹر میں اپنے طبی معائنے کر سکیں گے۔"

اس کے بعد ڈاکٹر روبوٹ کے ذریعے فراہم کردہ نتائج کا جائزہ لے سکیں گے یہ ایک مفید قدم ہے خاص طور پر ان لوگوں کے لیے جو دور دراز کے مقامات پر رہتے ہیں۔

یہ روبوٹ کئی کام انجام دے سکتے ہیں، جیسے کھانا پیش کرنا، پانی کی بوتل کھولنا، مریض کے گرنے کی صورت میں مدد مانگنا، یا اس کے اہل خانہ یا دوستوں کے ساتھ ویڈیو چیٹ کرنا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں