ماسکو میں چینی صدر کے ہوٹل میں KFC کھانوں کی فراہمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یوکرین میں روس کے فوجی آپریشن کے بعد اپنے پہلے دورے پر ماسکو آئے چینی صدر شی جن پنگ کے دورے کو عالمی سطح پر کوریج ملی۔ انہوں نے ماسکو میں پرتعیش ہوٹلوں کے بجائے چینی ملکیت والے ہوٹلوں کو ترجیح دی۔

تاہم اس سے صحافیوں اور ان کے کیمروں کا تجسس کم نہ ہوا۔ایک ویڈیو کلپ میں سولکس ہوٹل کی سخت سکیورٹی کے باوجود بڑی مقدار میں "کینٹکی فرائیڈ چکن" کھانوں کی ترسیل کا انکشاف ہوا ہے۔

برطانوی اخبار ’ٹیلی گراف‘ کے مطابق منگل کی سہ پہر کو ہوٹل کے باہر فوٹو گرافروں نے ماسکو میں ایک ڈیلیوری مین کو پکڑ لیا جو کہ درجنوں KFC بیگز کو اتار رہے تھے۔ یہ بیگ ایک چینی ملازمین نے داخلی دروازے پر چھوڑے تھے۔

چینی طرز کا ہوٹل

اس ہوٹل میں چین سے باہر سب سے بڑا رسمی چینی باغ ہے جو 13 ایکڑ پر عبادت گاہوں اور تالابوں کے سٹی ماڈل پر مشتمل ہے۔

ہوٹل بالواسطہ طور پر چائنا نیشنل پیٹرولیم کارپوریشن کی ملکیت ہے۔

اوور گراؤنڈ ریلوے اسٹیشن کے علاوہ کچھ قریبی نشانات والے مضافاتی علاقے میں یہ فینگ شوئی کے اصولوں کے مطابق ڈیزائن کیے گئے کمرے پیش کرتا ہے، جس میں باغیچے کے نظارے اور سنگ مرمر کے باتھ روم ہیں۔

کینٹکی فرائیڈ چکن ان لاتعداد مغربی برانڈز میں سے ایک ہے جو روسی مارکیٹ سے نکل چکے ہیں یا اس سے باہر نکلنے کی تیاری کر رہے ہیں۔

چین میں فاسٹ فوڈ کا علمبردار

میڈرڈ میں ایک ریستوراں آپریٹر نے پچھلے مہینے کہا تھا کہ اس نے روس میں اپنے KFC ریستوران کو کسی دوسرے خریدار کو فروخت کرنے کا فیصلہ کیا ہے جب کہ فرنچائزی نے پچھلے معاہدے کو روک دیا تھا۔

روس میں رہتے ہوئے میک ڈونلڈز ملک کی سرمایہ داری کی طرف منتقلی کی علامت بن گیا اور اس کے بعد سے سب سے مشہور مغربی فاسٹ فوڈ چین بن گیا۔

کینٹکی فرائیڈ چکن چین میں فاسٹ فوڈ کا علمبردار تھا اور اس نے مارکیٹ کے کم از کم 40 فیصد حصے پر قبضہ کر لیا ہے۔

چین میں ریستوران نے مینیو میں روایتی چینی پکوان جیسے کونج اور انڈے کے پکوڑے شامل کر کے اپنی مقبولیت کو برقرار رکھا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں