ٹرمپ پر فرد جرم کی خوشی سے رقص کروں گی: پورن سٹار سٹورمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے حامی اور مخالفین دونوں مین ہٹن فوجداری عدالت کے فیصلے کے منتظر ہیں۔ توقع کی جا رہی ہے کہ مین ہٹن کی فوج داری عدالت ڈونلڈ ٹرمپ پر فرد جرم عاید کر سکتی ہے۔

ایسے میں ایک سابقہ پورن سٹار کے ٹرمپ کے حوالے سے بیان نے سوش میڈیا پر طوفان برپا کیا ہے۔ پورن سٹار سٹورمی ڈینیئلز نے سابق صدر کے خلاف ممکنہ طور پر سنائی جانے والی سزا پر طنزیہ بات کی۔

اس کے ایک ٹویٹر فالور کی ٹویٹ کے جواب میں انہوں نے طنزیہ ٹویٹس میں کہا ’’کہ اگر ٹرمپ کو سزا سنائی گئی اور انہیں جیل میں ڈالا گیا تو وہ سڑک پر خوشی میں رقص کریں گی۔‘‘

ری پبلکن صدر کےحامیوں کی طرف سے امریکی ماڈل کے خلاف تنقید کی جا رہی ہے۔ ڈینیئلز کے تبصرے ایک ایسے وقت میں سامنے آئے جب مین ہٹن میں ٹرمپ کے خلاف قانونی اور عدالتی فیصلوں کا انتظار کیا جا رہا ہے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ سابق امریکی صدر کو مین ہٹن ایلون پراگ میں پبلک پراسیکیوٹر کے دفتر نے اپنی 2016 کی صدارتی مہم کے دوران ڈینیئلز کو "خفیہ طریقے سے" رقم ادا کرنے کے الزامات کے بارے میں تحقیقات کا سامنا ہے۔ انہوں نے یہ رقم ڈینیئلز کے ساتھ مبینہ غیر ازدواجی تعلقات کو صیغہ راز میں رکھنے کے لیے دی تھی۔

سابقہ پورن سٹار نے اس بات کی تصدیق کی کہ انہیں ان کے وکیل کے ذریعے رقم موصول ہوئی تھی تاہم ٹرمپ نے بار بار اس کی تردید کی ہے۔ پچھلے دنوں کے دوران اس تفتیش پر سوال اٹھایا گیا۔ مین ہٹن عدالت پر اس کیس پر سیاست کرنے کا الزام لگایا۔

انہوں نے کہاکہ پراگ نے اپنے سابق وکیل مائیکل کوہن کی طرف سے "ایک مسخ شدہ سرٹیفکیٹ" کے نام سے "قانون کی خلاف ورزی" کی ہے جنہوں نے گذشتہ ہفتے گرینڈ جیوری سے قبل نمائندگی کی تھی۔

انہوں نے اپنے حامیوں سے مطالبہ کیا کہ وہ اس کی حمایت کریں اور اگر انہیں گرفتار کیا گیا تو عدالت کے سامنے مظاہرہ کریں۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ 2006 سے مئی 2018 تک ٹرمپ کے لیے کام کرنے والے کوہن نے جون 2018 میں ان کے خلاف وفاقی تحقیقات کا آغاز کیا تھا۔ پھر 2019 میں ان کے جرائم پر ان پر فرد جرم عاید کی گئی تھی جس میں غیر قانونی ادائیگیوں کی سہولت اور کانگریس پر جھوٹ بولنے کے الزمات شامل تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں