چین کے ساتھ فوجی اتحاد قائم نہیں کریں گے: ولادی میر پوتین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یوکرین میں فوجی آپریشن اور چین کے ساتھ حالیہ تعلقات کی وجہ سے روس اور مغرب کے درمیان عالمی تناؤ کی شدت کی روشنی میں روسی صدر ولادی میر پوتین نے زور دیا ہے کہ ان کا ملک بیجنگ کے ساتھ فوجی اتحاد قائم نہیں کر رہا ہے۔

روسی صدر نے اس بات پر زور دیا کہ ان کا ملک کسی بھی ملک کو دھمکی نہیں دیتا۔ انہوں نے چینل "Russia-24" پر پوچھے گئے اس سوال کا جواب دیا ’’کیا ماسکو اور بیجنگ کے درمیان تعاون مغرب کے لیے خطرہ ہے۔‘‘

ہمارے پاس کوئی راز نہیں

صدر پوتین نے مزید کہا کہ "نہیں یہ الزامات حقیقت سے قطعی مطابقت نہیں رکھتے۔" انہوں نے مزید کہا کہ روس چین کے ساتھ کوئی فوجی اتحاد نہیں بناتا بلکہ فوجی اور تکنیکی شعبے میں تعاون کرتا ہے۔ صدر پوتین نے نشاندہی کی کہ ان کا ملک شفافیت کے نقطہ نظر کی پیروی کرتا ہے اور یہ کہ اس کا کوئی راز نہیں ہے۔

یوکرین میں تنازع ختم کرنے کی چینی تجویز

روسی صدر کے یہ الفاظ چین اور روس کے تعلقات میں حالیہ پیش رفت کے بارے میں مغربی ممالک کی طرف سے اٹھائے گئے خدشات کے جواب میں سامنے آئے ہیں۔

دوسری طرف پچھلے کچھ عرصے سے چین اور روس کے درمیان بعض اہم امور پر تعلقات قریب ہو رہے ہیں۔

اگرچہ بیجنگ نے اپنے مغربی پڑوسی ملک یوکرین کے خلاف ماسکو کی فوجی مہم کی واضح حمایت نہیں کی، لیکن اس نے کریملن پر کسی بھی طرح سے تنقید بھی نہیں کی۔ البتہ چین نے ایک سے زیادہ بار نیٹو کو روس کو اشتعال دلانے کا ذمہ دار ٹھہرایا۔

اسٹریٹجک شراکت داری

قابل ذکر ہے کہ چین کے صدر شی جن پنگ اور روسی صدر ولادیمیر پوتین نے چند روز قبل ماسکو میں اسٹریٹجک پارٹنرشپ کا اعلان کیا تھا، جس کا مقصد امریکی اثر و رسوخ کا مقابلہ کرنا تھا۔ اس موقعے پر دونوں صدور نے کہا تھا کہ تعاون کے کوئی "ممنوعہ" شعبے نہیں ہوں گے۔

روس کی حمایت سے چین کو کیا فائدہ؟

یہ چین-روسی میل جول ایک ایسے وقت میں ہوا ہے جب ایک طرف واشنگٹن اور ماسکو اور دوسری طرف بیجنگ کے درمیان کشیدگی بڑھ رہی ہے۔

روس کی طرف سے یوکرین کے خلاف چھیڑی جانے والی جنگ نے واشنگٹن کو ماسکو پر ہزاروں پابندیاں عائد کرنے پر اکسایا جس سے چین اور روس کے درمیان قربت بڑھی ہے۔

صد امریکی اثر و رسوخ کا مقابلہ کرنا تھا۔ اس موقعے پر دونوں صدور نے کہا تھا کہ تعاون کے کوئی "ممنوعہ" شعبے نہیں ہوں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں