اسرائیلی بمباری کے بعد لبنان کا سلامتی کونسل کو باضابطہ شکایت کرنے کا فیصلہ

لبنانی فوج یونیفیل کے ساتھ تعاون کرنے اور ملک میں استحکام برقرار رکھنے کے لیے مناسب اقدامات کی خواہاں ہے: وزیر دفاع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

لبنان کی وزارت خارجہ نے جمعہ کو کہا ہے کہ اس نے ملک کے جنوب میں مختلف علاقوں پر اسرائیلی بمباری کے بعد اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں سرکاری شکایت پیش کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

وزارت نے ایک ٹویٹ میں مزید کہا کہ اسرائیلی بمباری اور حملہ جمعہ کو صبح کے وقت کیا گیا۔ یہ حملہ جان بوجھ کر کیا جانے والا حملہ تھا اور یہ لبنان کی خودمختاری اور سلامتی کونسل کی قرارداد نمبر 1701 کی صریح خلاف ورزی ہے۔ ایسے حملوں سے لبنان کے جنوب میں استحکام کو خطرہ ہے۔

واضح رہے جمعرات کو لبنان کی جانب سے شمالی اسرائیل پر کئی راکٹ فائر کیے گئے تھے۔ اس کے بعد اسرائیلی فوج نے جنوبی لبنان کے کئی قصبوں پر توپ خانے سے گولہ باری کی اور غزہ کی پٹی پر شدید فضائی حملے کیے۔ اس دوران بین الاقوامی برادری نے تمام فریقوں سے امن اور تحمل کا مظاہرہ کرنے کی اپیل کی ہے۔

لبنانی وزارت خارجہ نے کہا کہ شکایت درج کرنے کا فیصلہ نگراں وزیر اعظم نجیب میقاتی سے مشاورت کے بعد کیا گیا ہے۔

میقاتی نے ایک بیان جاری کیا ہے جس میں لبنانی سرزمین سے کسی بھی فوجی کارروائی کی مذمت کی گئی جس سے استحکام کو خطرہ ہو۔ اس حوالے سے حزب اللہ کی جانب سے ابھی تک کوئی ردعمل جاری نہیں کیا گیا ۔ قبل ازیں لبنان سے اسرائیل کی جانب راکٹ فائر کیے جانے سے قبل حزب اللہ کے ایک اعلیٰ عہدیدار ہاشم صفی الدین نے مسجد اقصیٰ پر اسرائیلی فوجیوں کے دھاوے کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ الاقصیٰ کی کسی بھی خلاف ورزی سے پورے خطے میں آگ بھڑک اٹھے گی۔

دریں اثنا آج جمعہ کو لبنان کے وزیر دفاع موریس سیلم نے کہا ہے کہ ملک کے جنوب میں بڑھتی ہوئی کشیدگی سلامتی اور استحکام کے لیے براہ راست خطرہ ہے۔ موریس نے فوج کی کسی بھی حملے کا مقابلہ کرنے کے لیے تیاری کرنے پر بھی زور دیا۔

موریس سلیم نے اطالوی وزیر دفاع گیڈو کروسیٹو کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران ریمارکس میں مزید کہا کہ لبنانی فوج یونیفیل کے ساتھ اعلیٰ ترین سطح پر تعاون کی خواہشمند ہے اور رہے گی۔

لبنانی وزیر نے اس بات کی تصدیق کی کہ فوج سلامتی کو کنٹرول کرنے اور جنوب میں استحکام اور امن برقرار رکھنے کے لیے مناسب اقدامات کرے گی اور ساتھ ہی ساتھ "کسی بھی جارحیت کا مقابلہ کرنے" کے لیے اپنی مستقل تیاری رکھے گی۔

جنوبی لبنان میں اقوام متحدہ کی عبوری فورس (UNIFIL) نے جمعہ کی صبح اسرائیل کی طرف سے جنوبی لبنان پر کی جانے والی بمباری کے بعد ایک بیان میں کہا تھا کہ دونوں فریق جنگ نہیں چاہتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں