شامی پناہ گزین ایک جرمن میونسپلٹی کا میئر مقرر ہو گیا، جانیے کیسے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جرمنی کے جنوبی صوبے باڈن ورٹمبرگ میں انتیس سالہ شامی مہاجر ریان الشبل کو ایک گاؤں کا میئر منتخب کر لیا گیا ہے۔ ریان اکیس برس کی عمر میں بطور مہاجر جرمنی آئے تھے اور انہیں قطعی اکثریت سے مقامی بلدیہ کا سربراہ منتخب کیا گیا۔

باڈن ورٹمبرگ کے صوبائی دارالحکومت شٹٹ گارٹ سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق ریان الشبل کو میئر کے عہدے پر انتخاب کے لیے ہونے والی رائے دہی میں 55.41 فیصد ووٹ ملے۔ انتخابی نتائج کے مطابق الشبل اکثریتی ووٹ لے کر عہدے پر فائز ہوئے۔

ریان الشبل کی عمر اس وقت 29 برس ہے اور وہ خانہ جنگی کے شکار ملک شام سے اپنی جان بچانے کے لیے فرار ہو کر 2015ء میں کئی دیگر مہاجرین کے ساتھ پناہ کے متلاشی غیر ملکی مہاجر کے طور پر جرمنی پہنچے تھے۔

میئر کے طور پر اپنے انتخاب کے لیے انہوں نے کسی بھی سیاسی جماعت کے نمائندے کے بجائے ایک آزاد امیدوار کے طور پر حصہ لیا۔ نتیجہ یہ نکلا کہ اب وہ جنوب مغربی جرمن صوبے باڈن ورٹمبرگ میں اوسٹلزہائم نامی دیہی بلدیاتی علاقے کے میئر منتخب ہو گئے ہیں۔

ریان الشبل سیاسی طور پر جرمنی میں ماحول پسندوں کی گرین پارٹی کے رکن بھی ہیں اور اس کے لیے کام بھی کرتے ہیں مگر ان کا کہنا تھا کہ وہ اوسٹلزہائم کے بلدیاتی سربراہ کے الیکشن میں ایک آزاد امیدوار کے طور پر حصہ لینا چاہتے تھے اور مقامی شہریوں کی اکثریت نے ان کو ووٹ دے کر انہیں کامیاب کرایا ہے۔

ریان الشبل کا شام میں آبائی شہر ملک کے جنوب مغرب میں واقع شہر سویدا ہے، جو اسی نام کے خطے کا دارالحکومت بھی ہے۔ الشبل شامی خانہ جنگی کے دوران اپنی جان بچا کر 21 برس کی عمر میں سویدا سے رخصت ہوئے تھے۔

الشبل گزشتہ سات برسوں سے اوسٹلزہائم کے قریبی قصبے آلٹ ہَینگ شٹٹ کی بلدیاتی انتظامیہ کے لیے کام کرتے رہے ہیں۔ اب لیکن وہ اوسٹلزہائم کا میئر منتخب ہونے کے بعد اسی گاؤں میں منتقل ہو جائیں گے، جو باڈن ورٹمبرگ میں کلا نامی کاؤنٹی میں واقع ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں