روس اور یوکرین

یوکرین کا داغا میزائل روس کے زیرانتظام کریمیا میں مارگرایا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روس کے زیرانتظام جمہوریہ کریمیا کی انتظامیہ کے سربراہ نے ہفتے کے روزکہا ہے کہ یوکرین سے داغے گئے ایک میزائل کو بحیرہ اسود کے کنارے واقع قصبے فیودوسیا کے اوپرمار گرایا گیا ہے۔

روس نے 2014 میں یوکرین کی جمہوریہ کریمیاکا زبردستی الحاق کرلیا تھا۔اس وقت یوکرین میں ماسکو کے حامی صدر کا تختہ الٹ دیا گیا تھا۔ کِیف نے جزیرہ نما اسود کے ساتھ ساتھ روسی افواج کے زیرقبضہ اپنے دیگر تمام علاقوں پر دوبارہ قبضہ کرنے کا عہد کیا ہے۔

کریمیا کی انتظامیہ سرگئی اکسیونوف نے ٹیلی گرام پر کہا کہ یوکرین نے یہ میزائل داغا تھا اور اس کو فیودوسیا کے اوپر مار گرایا گیا ہے لیکن انھوں نے اس میزائل کے بارے میں مزید کوئی تفصیل نہیں بتائی ہے کہ اس کا کیا نام کیا تھا یا کس کا ساختہ تھا۔روس کی خبررساں ایجنسی تاس نے اکسینوف کے مشیر اولیگ کریوکوف کے حوالے سے بتایا ہے کہ کریمیا کے ایک قصبے میں میزائل کا ملبہ گرا ہے تاہم کسی جانی یا مالی نقصان کی اطلاع نہیں ہے۔

کریمیاکے مشرق میں واقع فیودوسیا یوکرین کے زیرقبضہ قریبی علاقے سے قریباً 300 کلومیٹر (186 میل) دور ہے۔ یہ خیال کیا جاتا ہے کہ یوکرین کے پاس اتنے فاصلے تک مارکرنے والے اپنے میزائل نہیں ہیں۔

کریمیا میں روس کے مقررکردہ حکام اس سے قبل یوکرین کی افواج پر ڈرون حملوں کا الزام عاید کرتے رہے ہیں۔تاہم کیف کے حکام عام طور پر اس کی ذمے داری قبول کرنے سے گریز کرتے رہے ہیں۔

یوکرین کے زیراستعمال امریکا کے مہیّاکردہ ہیمارس راکٹوں کی رینج 80 کلومیٹر (50 میل) ہے۔ واشنگٹن نے یوکرین کو جی ایل ایس ڈی بی گائیڈڈ اسمارٹ بم مہیا کرنے کا بھی وعدہ کیا ہے۔یہ 150 کلومیٹر (93 میل) تک مارکرسکتے ہیں لیکن کیف نے ابھی تک ان کی وصولی کی تصدیق نہیں کی ہے۔

روس نے مارچ کے آخرمیں کہاتھا کہ اس نے یوکرین کی افواج کی جانب سے داغے گئے امریکا کے مہیّاکردہ جی ایل ایس ڈی بی گائیڈڈ اسمارٹ بم کو پہلی بارمارگرایا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں