یوکرین سے متعلق خفیہ امریکی دستاویزات لیک ہونے کی تحقیقات جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی محکمہ انصاف کا کہنا ہے کہ امریکی حکومت کے خفیہ دستاویزات کے انٹرنیٹ پر شائع ہونے سے متعلق تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

ان خفیہ دستاویزات میں یوکرین کی امریکی امداد سے متعلق دستاویزات بھی شامل ہیں۔ اس کے علاوہ ان دستاویزات میں امریکی اتحادیوں کے حساس تجزیے بھی شامل تھے جنہیں انٹرنیٹ پر شائع کیاگیا ۔

امریکی محکمہ انصاف کے ایک ترجمان نے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ "ہم نے امریکی محکمہ دفاع سے رابطہ کر کے اس واقعہ سے متعلق تحقیقات شروع کر دی ہیں۔"

حالیہ دنوں میں ٹوئٹر، ٹیلی گرام، ڈسکورڈ اور دیگر سماجی رابطے کی ویب سائٹس پر خفیہ دستاویزات اور پریزینٹیشن سلائیڈز وقتا فوقتا جاری کی جارہی ہیں اور یہ سلسلہ ابھی تک جاری ہے۔

امریکی محکمہ دفاع پینٹاگون کے مطابق اس واقعہ کی نگرانی کی جارہی ہے اور اس سے قبل اس واقعہ کو محکمہ انصاف کو ریفر کر دیا گیا تھا۔

امریکی حکام نے امریکی اخبار واشنگٹن پوسٹ کو بتایا کہ ان دستاویزات میں موجود کچھ معلومات میں رد وبدل دیکھنے میں آیا ہے مگر اکثر دستاویزات میں موجود معلومات وائٹ ہائوس، پینٹاگون اور محکمہ خارجہ کے درمیان شئیر کی جانے والی معلومات سے ہم آہنگی رکھتی ہے۔

دفاعی ماہرین کے مطابق امریکی خفیہ دستاویزات کے افشا ہونے کا واقعہ امریکی حکام کے لئے نقصان دہ اور شرمناک ہے۔ ان دستاویزات کی مدد سے روس کو اپنے فوجی نظام میں امریکا کی خفیہ رسائی سے متعلق آگاہی ملے گی۔

اسرائیل میں حکومت مخالف احتجاج میں موساد کی "مشتبہ" مداخلت

ادھر پینٹاگون کی ایک اور لیک ہونے والی دستاویزات میں یہ دعویٰ بھی شامل ہے کہ اسرائیل کی غیر ملکی انٹیلی جنس سروس ’موساد‘ کی قیادت نے شہریوں اور اپنے ملازمین کو حکومت مخالف مظاہروں میں حصہ لینے کی ترغیب دی تھی۔

تاہم اسرائیلی دفاعی حکام نے اس الزام کی تردید کی ہے۔

واشنگٹن پوسٹ کے مطابق، منظر عام آنے والی دستاویز میں بتایا گیا ہے کہ فروری میں ’موساد‘ کی جاسوسی سروس کے سینیر رہ نماؤں نے ’موساد‘ کے اہلکاروں اور اسرائیلی شہریوں سے نئی اسرائیلی حکومت کے لیے مجوزہ عدالتی اصلاحات کے خلاف احتجاج کرنے کے لیے بلایا، جس میں اسرائیلی حکومت کی مخالفت کرنے کے لیے کئی واضح مطالبات بھی شامل تھے۔

اخبار کے مطابق غیر ملکی جاسوسی ایجنسی موساد کی اسرائیلی سیاست میں براہ راست مداخلت ایک اہم انکشاف ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں