یمن اور حوثی

یمن میں قیدیوں کا تبادلہ 13 اپریل سے شروع ہوگا،عمل تین دن جاری رہے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

یمن کی حکومت کے ایک عہدہ دارنے بتایاہے کہ امن کی بڑھتی ہوئی امیدوں کے پس منظرمیں وحشیانہ خانہ جنگی کے دوران میں پکڑے گئے سیکڑوں قیدیوں کا تبادلہ جمعرات سے شروع ہوگا۔

یمن اورسعودی عرب کے درمیان قریباً 900 قیدیوں کو منتقل کیا جائے گا۔ان میں زیادہ ترایران کی حمایت یافتہ حوثی ملیشیا کے ساتھ مل کر یمنی فوج کے خلاف لڑتے رہے تھے۔

قیدیوں کا یہ تبادلہ تین روز تک جاری رہے گا اور یہ اکتوبر2020 کے بعد سب سے بڑا تبادلہ ہوگا۔

جزیرہ نما عرب کا غریب ترین ملک مارچ 2015 سے جنگ کا شکارہے۔اس سے چند ماہ قبل ستمبر2014ء میں حوثیوں نے دارالحکومت صنعاء پرقبضہ کر لیا تھا اور ان کی یمنی حکومت کی وفادار افواج کے ساتھ لڑائی چھڑ گئی تھی۔

اقوام متحدہ کے مطابق براہ راست اور بالواسطہ اسباب کی بنا پرجنگ کے نتیجے میں ہزاروں افراد ہلاک ہوچکے ہیں اورلاکھوں بے گھرہوئے ہیں۔ اس وقت یمن دنیا کے بدترین انسانی بحران کا شکار ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں