سعودی عرب: اونٹوں کے نقوش کی بحالی کے منصوبے کے مالکانہ حقوق ہیریٹیج اتھارٹی کو حاصل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی عرب میں ہیریٹیج اتھارٹی نے چیئرمین ڈاکٹر جاسر الحربش کو حاصل اختیارات کے مطابق الجوف کے علاقے سکاکا میں واقع چٹانوں پر ’اونٹوں کے نقوش‘ کی بحالی کے منصوبے پر کام شروع کرنے کے لیے رئیل اسٹیٹ ملکیت حاصل کرنے کی خاطر اقدمات شروع کر دیے ہیں۔

اس منصوبے کے لیے ہیریٹیج کمیشن کے حق میں مالی سال 2023ء کے دوران بجٹ نمبر 404010000 کی منظوری دی گئی ہے۔

ہیری ٹیج اتھارٹی نے نظام کے آرٹیکل چھ اور سات میں طے شدہ طریقہ کار میں کمیٹیوں کی تشکیل، اس میں نمائندوں کی نامزدگی، ہر ایک ریئل اسٹیٹ کی تفصیل اور انوینٹری کمیٹی میں، معاوضے کی تخمینہ کمیٹی کی تشکیل کا بھی فیصلہ کیا ہے جو سرکاری گزٹ ام القریٰ میں فیصلے کی اشاعت کے پندرہ دن کے اندر تشکیل دی جائیں گی۔

ہیری ٹیج اتھارٹی اس حوالے سے جلد اجلاس طلب کرے گی۔ تفصیلات مرتب کرےگی اور ہر کمیٹی کے لیے اس کے کاموں کی انجام دہی کا طریقہ کار وضع کرے گی۔ بشرطیکہ یہ کمیٹیاں اس فیصلے کی تاریخ سے 60 دنوں کے اندر نظام کے تقاضوں کے مطابق اپنا کام مکمل کر لیں۔

مذکورہ بالا جائیداد کے مالکان کو کہا جائے گا کہ وہ جائیداد کے لیے اپنے پاس موجود ملکیتی دستاویزات ہیریٹیج اتھارٹی کے ہاس جمع کرائیں تاکہ ہیریٹیج کمیشن کے لیے "اونٹوں کے نقش و نگار کی جگہ کی بحالی" منصوبے پر عمل درآمد شروع کیا جا سکے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ سعودی عرب اور فرانسیسی ٹیموں نے پانچ سال قبل مملکت کے شمال مغرب میں الجوف کے شہر سکاکا میں اونٹوں اور گھوڑوں سمیت جانوروں کے ان کی قدرتی جسامت کے مطابق پتھروں پرکندہ نقوش پر مشتمل چٹانیں دریافت کی تھیں۔ ان چٹانوں پر موجود نقوش 10 ہزار سال قبل مسیح کی بتائے جاتے ہیں۔ ان نقوش کی وجہ سے اس جگہ کو "کیمل سائٹ" کہا جاتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں