ایرانی بحریہ نے امریکی آبدوزکو خلیج میں نمودار ہونے پرمجبورکردیا،امریکا کی تردید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایرانی بحریہ کے کمانڈر شہرام ایرانی نے دعویٰ کیا ہے کہ بحریہ نے امریکی آبدوز کو خلیج میں داخل ہوتے ہی نمودار ہونے پرمجبور کیا ہے لیکن امریکی بحریہ کے پانچویں بیڑے نے اس طرح کے کسی واقعے کی سرے سے تردید کی ہے۔

شہرام ایرانی نے جمعرات کو سرکاری ٹیلی ویژن کو بتایاکہ’’امریکی آبدوززیرِآب چلتی ہوئی قریب آرہی تھی لیکن ایرانی آبدوزفتح نے اس کا سراغ لگالیا،اس کا پیچھا کیا اور اس کوآبنائے ہرمز سے گزرتے ہوئے اسے سطح آب پرنمودار ہونے پر مجبور کیا۔یہ ہمارے علاقائی پانیوں میں بھی داخل ہوئی تھی لیکن اس نے انتباہ کے بعد اپنا راستہ درست کرلیا‘‘۔

ایرانی نے کہا:’’یہ آبدوز اپنی تمام صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے پوری خاموشی سے اور بغیر کسی سراغ کے گزرنے کی پوری کوشش کررہی تھی۔ ہم یقینی طورپر بین الاقوامی اداروں کے سامنے یہ معاملہ رکھیں گے اور انھیں بتائیں گے کہ اس آبدوز نے ہماری آبی سرحد کی خلاف ورزی کی ہے‘‘۔

دوسری جانب بحرین میں موجود امریکی بحریہ کے پانچویں بحری بیڑے نے ایران کی جانب سے اس غلط اطلاع کی تردید کی ہے۔بحری بیڑے کے کمانڈر ٹموتھی ہاکنزنے خبررساں ادارے رائٹرزکو بتایاکہ’’ امریکی آبدوز آج یا حال ہی میں آبنائے ہرمز سے نہیں گزری ہے‘‘۔

ان کا کہنا تھا کہ ’’یہ دعویٰ مزید ایرانی غلط معلومات کی نمائندگی کرتا ہے اورایسی اطلاعات علاقائی سمندری سلامتی اوراستحکام میں کردارادا نہیں کرتی ہیں‘‘۔

امریکی بحریہ نے رواں ماہ کے اوائل میں کہاتھاکہ جوہری توانائی سے چلنے والی گائیڈڈ میزائل آبدوز فلوریڈا مشرقِ اوسط میں اپنے پانچویں بیڑے کی معاونت میں کام کررہی ہے۔

خلیج میں ایرانی اورامریکی افواج کے درمیان ماضی میں اس طرح کی کئی جھڑپیں ہوچکی ہیں۔اپریل کے اوائل میں ایرانی بحریہ نے کہا تھا کہ اس نے خلیج کے دھانے پرایک امریکی جاسوس طیارے کی نشان دہی کی ہے اور اسے خبردارکیا ہے۔2019 میں ایران نے ایک امریکی ڈرون کو مار گرایا تھا جس کے بارے میں اس کا کہنا تھا کہ وہ جنوبی ایران کے اوپر پرواز کر رہا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں