برطانوی طیارے کی ہنگامی لینڈنگ کی انوکھی وجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایک برطانوی طیارے کو پرواز کے دوران دو مسافروں کے برے رویے کی وجہ سے جرمنی میں "ہنگامی لینڈنگ" کرنے پر مجبور کیا گیا۔ طیارہ برطانیہ میں لیورپول سے روانہ تھا اور اسے ترکی کے ہوائی اڈے پر لینڈ کرنا تھا۔

تفصیلات کے مطابق برطانوی کمپنی "ایزی جیٹ" کے طیارے کے پائلٹ نے پرواز میں "دو بدتمیز مسافروں" کی موجودگی کی وجہ سے، جرمنی کے میونخ ایئرپورٹ پر لینڈ کرنے کا فیصلہ کیا، جہاں انہیں اتار کر جرمنی کی پولیس کے حوالے کر دیا گیا۔

خلل ڈالنے والا رویہ

جان لینن ہوائی اڈے سے دوپہر 1.06 بجے ٹیک آف کرنے کے بعد، ترکی میں دالامان جانے والی ایئر بس کو دو مسافروں کے "خراب" رویے کی وجہ سے غیر طے شدہ لینڈنگ کرنا پڑی۔

پرواز کے تقریباً دو گھنٹے بعد، طیارے نے لینڈنگ سے پہلے میونخ کے اوپر چکر لگانا شروع کر دیا اور بدھ کی شام تقریباً 4.20 بجے رن وے پر پولیس نے طیارے کو گھیر لیا۔

عینی شاہدین نے بتایا کہ دونوں مسافر افسران کی مدد سے طیارے سے نکال دیے گئے۔ اور جہاز میں موجود کچھ دوسرے لوگوں نے کہا کہ وہ اپنے اردگرد ہونے والے تمام "ڈرامہ" سے "غیر محفوظ" محسوس کر رہے ہیں۔

نایاب حادثات

اس واقعے کے حوالے سےایزی جیٹ کے ایک ترجمان نے کہا: "ایزی جیٹ اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ 19 اپریل کو لیورپول سے ڈالمان جانے والی پرواز کا رخ میونخ کی طرف موڑ دیا گیا تھا اور اس میں سوار دو مسافروں کے خلل انگیز رویے کی وجہ سے پولیس کی مدد لی گئی تھی۔

کمپنی کا کہنا ہے کہ ایزی جیٹ کے کیبن کریو کو تمام حالات کا جائزہ لینے اور پرواز اور دیگر مسافروں کی حفاظت کو یقینی بنانے کے لیے فوری اور مناسب طریقے سے کام کرنے کی تربیت دی جاتی ہے۔

"اگرچہ اس طرح کے واقعات شاذ و نادر ہی ہوتے ہیں، ہم انہیں بہت سنجیدگی سے لیتے ہیں اور جہاز میں بدسلوکی یا دھمکی آمیز رویے کو برداشت نہیں کرتے،" تاہم"مسافروں اور عملے کی حفاظت ہماری ترجیح ہوتی ہے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں