سوڈان میں 600 افراد ہلاک ، گلیوں میں لاشیں اور 70 فیصد ہسپتال بند

دارالحکومت اور ریاستوں میں 78 میں سے 55 بنیادی ہسپتال کام نہیں کر پارہے، اور باقی بند ہونے کا خدشہ ہے: سوڈان ڈاکٹرز سنڈیکیٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سوڈان کے وزیر صحت ہیثم ابراہیم نے آج جمعہ کو العربیہ اور الحدث سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ملک کے تمام اسپتالوں میں اب تک 600 سے زائد اموات ریکارڈ کی گئی ہیں۔
عالمی ادارہ صحت نے تصدیق کی ہے کہ سوڈان میں 413 افراد ہلاک اور 3,551 زخمی ہیں۔

طبی اداروں نے کا کہنا ہے کہ ہسپتالوں میں درجنوں افراد ضروری آلات اور بجلی کی کمی کی وجہ سے مر رہے ہیں، جبکہ خرطوم کی گلیوں میں کئی دنوں سے لاشیں پڑی ہیں۔

ہسپتالوں میں ضروری سامان کی کمی کی وجہ سے علاج میں رکاوٹ کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں ایک ڈاکٹر نے "ٹاس" ایجنسی کو بتایا کہ "لوگ اپنے گھروں میں بھی مر رہے ہیں، کیونکہ ہم انہیں نہیں نکال سکتے، اور انہیں دفن کرنا بھی ممکن نہیں۔ لاشیں تین یا چار روز سے پڑی ہیں"
انہوں نے بتایا کہ ہسپتال میں آنے والے زخمیوں کے زخم شدید نوعیت کے ہیں۔

بین الاقوامی تنظیم ڈاکٹرز وِدآؤٹ بارڈرز نے کہا کہ اس کا عملہ سوڈان میں مزید طبی سامان لانے سے قاصر ہے، اور "اگر صورتحال نہ بدلی تو مزید جانی نقصان ہوگا۔"
انہوں نے بتایا کہ "الفاشر میں تنظیم کے تحت چلائے جانے والے ہسپتال میں طبی سامان صرف 3 ہفتے تک کے لیے کافی ہے"

سوڈان میں ہلال احمر تنظیم نے العربیہ کے ذریعے طبی عملے کے لیے محفوظ راستے کھولنے کا مطالبہ کیا۔

اس سے قبل، سوڈان ڈاکٹرز سنڈیکیٹ کی ابتدائی کمیٹی نے کہا کہ فوج اور سریع الحرکت فورسز کے درمیان جھڑپوں کے علاقوں سے ملحقہ 70% ہسپتال خدمات فراہم نہیں کر پا رہے۔

سنڈیکیٹ نے کہا کہ دارالحکومت اور دیگر ریاستوں میں 78 میں سے 55 بنیادی اسپتالوں کو کام سے روک دیا گیا ہے، جبکہ باقی ہسپتال عملے، طبی سامان کی سپلائی، بجلی اور پانی کی کمی کی وجہ سے بند ہونے کا خدشہ ہے۔

سنڈیکیٹ نے بتایا کہ الابیض شہر میں 4 اسپتالوں پر بمباری کی گئی، جس سے بمباری کا نشانہ بننے والے اسپتالوں کی کل تعداد 13 ہوگئی ہے۔
الابیض ہسپتال میں بمباری کے نتیجے میں 26 افراد ہلاک اور 33 زخمی ہوئے تھے۔

یونین نے کہا کہ 19 ہسپتالوں کو زبردستی خالی کرنے پر مجبور کیا گیا ہے۔

ابتدائی کمیٹی نے ایک الگ بیان میں یہ بھی اعلان کیا کہ گزشتہ ہفتے کے روز شروع ہونے والی جھڑپوں کے آغاز سے اب تک شہریوں کی ہلاکتوں کی تعداد بڑھ کر 243 ہو گئی ہے اور 1,335 زخمی ہو چکے ہیں۔

کمیٹی نے ایک بیان میں کہا کہ کل، جمعرات کو 45 عام شہری مارے گئے، جب کہ 128 زخمی ہوئے، جن میں بعض کی حالت تشویش ناک ہے۔

بیان میں اس بات کی نشاندہی کی گئی ہے کہ ملک میں سیکورٹی کی صورتحال نقل و حرکت اور ہسپتالوں تک رسائی میں دشواری کی وجہ سے متعدد ہلاکتیں اور زخمی افراد اس فہرست میں شامل نہیں ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں