کیمرہ بند کرو! سوڈان کی آر ایس ایف ملیشیا نے ’العربیہ‘ کی نشریات روکوا دیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سوڈان کی سریع الحرکت فورسز کی ایک پٹرولنگ پارٹی نے ’العربیہ‘ چینل کے نامہ نگار سالم الہاشمی کی براہ راست نشریات روکنے کے لیے مداخلت کی جب وہ خرطوم کی گلیوں میں جنگ کے حالات کی کوریج کر رہے تھے۔

مسلح افراد سالم کے پاس آئے اور اس سے کیمرہ بند کرنے کا مطالبہ کیا۔ العربیہ کے نامہ نگار نے حفظ ما تقدم کے طور پر کیمرہ بندکر دیا مگر اس نے صورتحال ختم ہونے تک گفتگو جاری رکھی۔ بعد ازں مسلح افراد وہاں سے چلے گئے۔

"نامہ نگار محفوظ ہے"

گشت پر مامور مسلح افراد کے چلے جانے کے بعد نامہ نگار نے ’’العربیہ‘‘ نیوز روم کو بتایا کہ وہ ٹھیک ہیں۔ انہوں نے کیمروں سے دور رہ کر بات کرتے ہوئے کہا کہ انہیں کوئی نقصان نہیں پہنچایا گیا۔

قابل ذکر ہے کہ 15 اپریل کو فوج اور ریپڈ سپورٹ فورسز کے درمیان لڑائی شروع ہونے کے بعد سے کئی بار جنگ بندی ہو چکی ہے، لیکن یہ عارضی جنگ بندی زیادہ دیر برقرار نہیں رہی، متحارب فورسز ایک دوسرے پر حملے کر کے جنگ بندی توڑ دیتی ہیں۔

سیکڑوں ہلاکتیں

سوڈانی وزارت صحت کے ایک بیان کے مطابق لڑائیوں میں اب تک کم از کم 512 افراد ہلاک اور ہزاروں زخمی ہو چکے ہیں، تاہم جاری لڑائی کے نتیجے میں متاثرین کی تعداد اس سے کہیں زیادہ ہو سکتی ہے۔

دریں اثنا، خوراک اور پینے کے پانی کی کمی، بجلی کی بندش اور ایندھن کی بھاری قیمتوں نے عوام کی مشکلات بڑھا دی ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ خرطوم سے ہزاروں لوگ دوسری محفوظ ریاستوں کی طرف بھاگ گئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں