اقوام متحدہ کے ایلچی سوڈان کا سفر کریں گے: گوٹیرس

سوڈان میں انسانی صورتحال نازک موڑ پر پہنچ گئی، فوری ریلیف کے لیے جائزہ لیا جائے گا: گریفتھس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل گوٹیرس کے ترجمان نے اتوار کو کہا ہے کہ غیر معمولی حالات کے دوران اقوام متحدہ کے ایلچی کو سوڈان بھیجا جارہا ہے۔ سوڈان میں 15 اپریل سے شروع ہونے والی لڑائی تیسرے ہفتے میں داخل ہوگئی ہے۔

یہ اعلان اس وقت سامنے آیا جب خرطوم میں فوج اور بھاری ہتھیاروں سے لیس نیم فوجی دستے لڑائی جاری رکھے ہوئے ہیں۔ جنگ بندی میں 72 گھنٹے کی توسیع کا اعلان کیا گیا ہے لیکن اس جنگ بندی کی خلاف ورزیاں بھی ساتھ ساتھ جاری ہیں۔

اقوام متحدہ کے ایمرجنسی ریلیف کوآرڈینیٹر مارٹن گریفتھس ایلچی کے طور پر خدمات انجام دیں گے۔ مارٹن گریفتھس نے اتوار کو ایک الگ بیان میں کہا کہ سوڈان میں انسانی ہمدردی کی صورت حال نازک موڑ پر پہنچ رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں یہ جاننے کے لیے خطے میں جا رہا ہوں کہ ہم ان لاکھوں لوگوں کو فوری ریلیف کیسے پہنچا سکتے ہیں جن کی زندگیاں راتوں رات تباہی کے دہانے پر پہنچ گئی ہیں۔

انہوں نے کہا سوڈان میں انسانی ہمدردی کی کارروائیوں سے متعلق دفاتر اور گوداموں میں بڑے پیمانے پر لوٹ مار کی گئی۔ اس لوٹ مار نے ہماری زیادہ تر سپلائیز کو ختم کر دیا تھا۔ اب ہم اضافی سامان لانے اور تقسیم کرنے کے فوری طریقے تلاش کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ واضح حل یہ ہوگا کہ لڑائی روک دی جائے۔

سوڈان میں جاری لڑائی میں اب تک 500 سے زیادہ افراد مارے جا چکے ہیں۔ دسیوں ہزار افراد ملک کے اندر یا بیرون ملک محفوظ مقامات پر جانے پر مجبور ہیں۔ سوڈان میں تیزی سے بگڑتے ہوئے انسانی بحران کی روشنی میں ترجمان سٹیفن دوجارک نے ایک بیان میں گریفتھس کی تعیناتی کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ یو این ایلچی فوری طور پر خطے کا سفر کریں گے۔

گریفتھس نے کہا ہے کہ سوڈان میں خاندان پانی، خوراک، ایندھن اور دیگر اجناس تک رسائی کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔ کچھ لوگ سب سے زیادہ متاثرہ علاقوں سے نقل و حمل کے اخراجات کی وجہ سے نقل مکانی کرنے سے بھی قاصر ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں