ہندوستان کی سستی ایئر لائن ’’گو فرسٹ‘‘ دیوالیہ، مسافر مشکلات کا شکار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ہندوستانی فضائی کمپنی’’ گو فرسٹ‘‘ نے دیوالیہ ہونےکا دعویٰ کیا اور بدھ سے شروع ہونے والی اپنی پروازوں کو تین دن کے لیے معطل کر دیا، جس سے ہزاروں مسافروں کو مشکلات کا سامنا ہے۔

منگل کو کمپنی کی ویب سائٹ پر ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ منسوخیاں آپریشنل وجوہات کی وجہ سے ہوئیں۔"

پریس ٹرسٹ آف انڈیا نیوز ایجنسی کے مطابق، منگل کو ملازمین کے نام ایک پیغام میں، ایئر لائن کے سربراہ کوشک کھونا نے کہا کہ "پریٹ اینڈ وٹنی" اسے طیاروں کے ناقص انجنوں کے متبادل فراہم کرنے میں ناکام رہے ہیں۔

عالمی سطح پر خدمات دینے والی ، امریکی ایرو اسپیس بنانے والی کمپنی پریٹ اینڈ وٹنی نے اس بارے میں فوری طور پر کوئی تبصرہ نہیں کیا۔

کھونا نے کہا کہ کمپنی تمام عملے کے لیے انتہائی احتیاط اور فکرمندی کے ساتھ صورتحال پر قابو کرنے کی ہر ممکن کوشش کر رہی ہے۔

گو فرسٹ کے پاس مارچ میں اوسطاً 30,000 یومیہ قومی مسافر تھے، اس لیے پروازوں میں رکاوٹ سے تقریباً 90,000 مسافروں کے متاثر ہونے کی توقع ہے۔

نتیش جین جو ایک تاجر ہیں، اپنے خاندان کے لیے ایک اور ایئر لائن سے زیادہ قیمت پر ٹکٹ خریدنے کی کوشش کر رہے تھے۔

انہوں نے کہا کہ"میں نے پیسے بچانے کے لیے چار مہینے پہلے ٹکٹ بک کروائے تھے اور اب ٹکٹ منسوخ کر دیے گئے ہیں۔ یہ ایئر لائن کی ذمہ داری ہے کہ وہ ہمارے لیے متبادل پروازوں کا بندوبست کرے۔

یہ ایئر لائن ہندوستان کے واڈیا گروپ کی ملکیت ہے۔

شہری ہوا بازی کے وزیر جیوترادتیہ سندھی نے کہا کہ حکومت ایئر لائن کی مدد کر رہی ہے۔

"گو فرسٹ کو اپنے انجنوں کے حوالے سے سپلائی چین کے اہم مسائل کا سامنا ہے۔ حکومت ایئر لائن کی ہر ممکن مدد کر رہی ہے،‘‘ انہوں نے کہا۔

روزنامہ انڈین ایکسپریس نے کہا کہ خراب انجنوں کے باعث کمپنی تقریباً 60 طیاروں پر مشتمل بیڑے میں سے نصف کو گراؤنڈ کرنے پر مجبور ہوگئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں